روز گرما گرم چائے پینے سے یہ خطرناک بیماری نہیں ہوتی، یہ کون سی بیماری ہے؟ جانئے

روز گرما گرم چائے پینے سے یہ خطرناک بیماری نہیں ہوتی، یہ کون سی بیماری ہے؟ ...
روز گرما گرم چائے پینے سے یہ خطرناک بیماری نہیں ہوتی، یہ کون سی بیماری ہے؟ جانئے

  


نیویارک (نیوز ڈیسک) جس طرح مغربی ممالک میں کافی بہت پسند کی جاتی ہے اسی طرح ہمارے ہاں صدیوں سے چائے کو مقبول ترین مشروب کی حیثیت حاصل ہے۔ اگرچہ چائے کے زیادہ استعمال کی حوصلہ شکنی کی جاتی ہے، لیکن سائنسدانوں نے ہر روز کم از کم ایک کپ گرما گرم چائے پینے والوں کو بڑی خوشخبری سنادی ہے۔ سائنسی جریدے ’برٹش جرنل آف آفتھلمالوجی‘ میں شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق روزانہ کم از کم ایک کپ گرم چائے پینے والوں میں بصارت کی بیماری گلوکوما (موتیا کی ایک خطرناک قسم) پیدا ہونے کا خدشہ 74 فیصد کم ہوتا ہے۔

اس تحقیق میں سائنسدانوں نے 10ہزار افراد سے ایک سال تک ان کے کھانے پینے کے معمولات اور طرز زندگی کے بارے میں معلومات جمع کیں جبکہ باقاعدگی سے ان کی بصارت کے ٹیسٹ بھی کئے جاتے رہے۔ تحقیق میں حصہ لینے والے افراد میں سے تقریباً 5 فیصد میں گلوکوما کی بیماری پائی گئی۔ ان فراد میں سے تقریباً نصف ایسے تھے جو کافی تو پیتے تھے لیکن ان میں چائے پینے کا رجحان نہ ہونے کے برابر تھا۔ دیگر افراد جن میں گلوکوما کی بیماری نہیں تھی باقاعدگی سے چائے نوشی کرتے تھے۔

’کینسر سے بچ کر رہنا ہے تو یہ ایک سبزی کھانا شروع کردیں‘

تحقیق کی سربراہی کرنے والی سائنسدان ڈاکٹر این کولمین، جن کا تعلق یونیورسٹی آف کیلیفورنیا سے ہے، کا کہنا تھا کہ یہ تحقیق اس لحاظ سے بہت اہم ہے کہ گلوکوما کو ناقابل علاج بیماری قرار دیا جاتاہے۔ اگر چائے کے باقاعدہ استعمال سے اس کے خدشات کو کم کیا جاسکتا ہے تو یہ انتہائی مثبت اور حوصلہ افزا بات ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق گلوکوما دنیا بھر میں نابینا پن کی دوسری بڑی وجہ ہے۔ اس بیماری میں آنکھ کی عصبی رگیں متاثر ہو جاتی ہیں اور آنکھ کے اندر پیدا ہونی والی خرابی اور کمزوری رفتہ رفتہ نابینا پن تک پہنچ جاتی ہے۔ گلوکوما ریسرچ فاﺅنڈیشن کے مطابق دنیا میں تقریباً چھ کروڑ افراد اس بیماری سے متاثر ہیں۔

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /تعلیم و صحت


loading...