فصلات کے پیداواری اہداف کا حصول یقینی بنائیں، سیکرٹری زراعت

فصلات کے پیداواری اہداف کا حصول یقینی بنائیں، سیکرٹری زراعت

  



لاہور(کامرس ڈیسک)  تمام افسران مقرر کردہ گائیڈ لائنز پر من و عن عمل کریں اور فصلات کے پیداواری اہداف کا حصول یقینی بنائیں،کام میں کوتاہی ہر گز برداشت نہیں کی جائے گی یہ بات سیکرٹری زراعت پنجاب واصف خورشید نے تحقیقاتی ادارہ برائے دھان کالا شاہ کاکو میں گوجرانوالا ڈویژن کی کارکردگی کے جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔اجلاس میں نعیم خاں ڈپٹی سیکرٹری زراعت(پلاننگ)،ڈاکٹر عابد محمود ڈائریکٹر جنرل زراعت(ریسرچ)،محمد صابر ڈائریکٹر تحقیقاتی ادارہ برائے دھان کالا شاہ کاکو،محمد منیر ڈائریکٹر گوجرانوالا ڈویژن،شیر محمد شراوت ڈائریکٹر لاہور ڈویژن،ڈاکٹر ریاض ڈائریکٹر پیسٹ وارننگ اینڈ کوالٹی کنٹرول آف پیسٹی سائیڈز لاہور،محمد رفیق اختر ڈائریکٹر نظامت زرعی اطلاعات پنجاب سمیت دیگر اعلیٰ افسران نے شرکت کی۔اجلاس میں سیکرٹری زراعت پنجاب کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ پچھلے سال کے مقابلے میں مالی سال2019-20 میں دھان کی موٹی اقسام کی جولائی تا نومبرایکسپورٹ میں 39 فیصد جبکہ باسمتی اقسام میں 61فیصد اضافہ ہوا ہے اور پچھلے سال کے مقابلے میں اس عرصہ کے دوران 1.115ملین ٹن کے مقابلے میں 1.601 ملین ٹن چاول برآمد کئے گئے جس سے 836ملین یو ایس ڈالر کا زرمبادلہ حاصل ہوا ہے۔سیکرٹری زراعت واصف خورشید کے استفسار پر ڈائریکٹر تحقیقاتی ادارہ برائے دھان کالا شاہ کاکو نے بتایا کہ امسال سپر باسمتی اور باسمتی515 اقسام سے اچھی پیداوار دیکھنے میں آئی ہے۔اجلاس کے دوران امسال سیکرٹری زراعت پنجاب واصف خورشید نے ہدایت کی کہ ایسی اقسام جو موسمیاتی تبدیلیوں کو برداشت کر سکیں دریافت کی جائیں۔سیکرٹری زراعت پنجاب کو بتایا گیا کہ امسال دھان کی دو نئی اقسام سپر باسمتی2019 اور سپر گولڈ کو عام کاشت کیلئے منظور کروایا گیا ہے جو بیماریوں اور موسمیاتی تبدیلیوں کے خلاف قوت مدافعت کی حامل ہیں۔اس موقع پر سیکرٹری زراعت نے دھان کی باقیات کی بروقت جانچ نہ ہونے پر متعلقہ افسران کی سرزنش کی اور کہا کہ کام کے سلسلے میں آئندہ کسی قسم کی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔

بریفنگ کے دوران سیکرٹری زراعت پنجاب کو بتایا گیا کہ گوجرانوالا ڈویژن کے6 اضلاع میں اب تک ٹارگٹ کے مطابق 253 لیزر لینڈ لیولرز کی قرعہ اندازی ہوچکی ہے اور انہیں کاشتکاروں تک پہنچایا جا رہا ہے۔سیکرٹری زراعت پنجاب نے جائزہ اجلاس میں استفسار کیا کہ گوجرانوالا ڈویژن میں پچھلے سال موسمی حالات کی وجہ سے گندم کی فصل پر رسٹ کا حملہ ہو ا تھا جس سے ڈویژن گوجرانوالا کی اوسط پیداوار32 من فی ایکڑ رہی تھی،امسال کیا انتظامات کئے گئے ہیں۔ڈاکٹر عابد محمود ڈائریکٹر جنرل زراعت (ریسرچ) نے اس پر بریفنگ دیتے ہوئے سیکرٹری زراعت کو بتایا کہ امسال گوجرانوالا ڈویژن میں زیادہ تر رسٹ کے خلاف قوت مدافعت رکھنے والی اقسام کو کاشت کیا گیا ہے اور اس کی مانیٹرنگ بھی کی جا رہی ہے کہ دوبارہ اس بیماری کا حملہ کم سے کم ہو۔اس سلسلے میں کاشتکاروں میں آگاہی مہم بھی چلائی جا رہی ہے۔سیکرٹری زراعت نے اس موقع پر ہدایات کیں کہ کاشتکاروں کیلئے آبپاشی اور زرعی مداخل کے استعمال کیلئے آگاہی مہم چلائی جائے۔اس کے علاوہ محکمہ میں آئی سی ٹی کے استعمال کو فروغ دیا جائے اور اس کے ذریعے ایسی ایپلیکشنز بنائی جائیں جس سے کاشتکاروں تک رسائی میں آسانی لائی جا سکے اور انہیں جدید پیداواری ٹیکنالوجی اور موسمی حالات سے آگاہی دی جا سکے۔سیکرٹری زراعت پنجاب نے تمام ڈائریکٹرز کو ہدایات کیں کہ وہ آئی سی ٹی کے ذریعے اپنے سٹاف کی مانیٹرنگ کا بھی استعمال کریں تاکہ وقت پر دفاتر میں حاضری یقینی بنائی جائے۔

مزید : کامرس