سمارٹ ورکنگ آئیڈ یاز پر مشتمل ماڈل پولیس اسٹیشن مسائل کا بہترین حل

سمارٹ ورکنگ آئیڈ یاز پر مشتمل ماڈل پولیس اسٹیشن مسائل کا بہترین حل

  



لاہور(کر ائم رپورٹر)انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب شعیب دستگیر نے کہاہے کہ وزیر اعظم پاکستان کے ویژن کے مطابق شہریوں کو سہولیات کی باآسانی فراہمی اور انکی جان و مال کا تحفظ پنجاب پولیس کی اولین ترجیح ہے اور اس سلسلے میں جدید ٹیکنالوجی اور سمارٹ ورکنگ کے آئیڈیاز پر مشتمل ماڈل پولیس اسٹیشن شہریوں کے مسائل کے خاتمے اور انہیں سروسز کی فوری فراہمی کا باعث بنیں گے،ساتھ ساتھ تھانہ کلچر کی تبدیلی کے عمل کو مزید تیز کریں گے جس سے پولیس اور عوام کے درمیان اعتماد سازی کی فضا مزید مضبوط ہوگی۔ ”سپیشل انیشئیٹو“ پراجیکٹ میں سمارٹ اینڈ کمیونٹی پولیسنگ کی طرز پر شہریوں کی جان و مال کے تحفظ کے علاوہ انکی سہولت اور خدمت پر بطور خاص توجہ دی گئی ہے۔ صوبے کی تمام ریجنز اور اضلاع میں 50 تھانوں کو(سپیشل انیشئیٹو) ماڈل پولیس اسٹیشنز کے طور پر اپ گریڈ کیا جارہا ہے اور اس پراجیکٹ کا باقاعدہ افتتاح وزیر اعظم پاکستان عمران خان کل (بروز ہفتہ) میانوالی کے سٹی پولیس اسٹیشن سے کریں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز سنٹرل پولیس آفس میں منعقدہ اہم اجلاس کی صدارت کے دوران افسران کو ہدایات دیتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں (سپیشل انیشئیٹو) ماڈل پولیس اسٹیشنزکا بذریعہ ویڈیو لنک جائزہ لیا جبکہ وزیر اعظم پاکستان کی میانوالی آمد اور سپیشل انیشئیٹوپولیس اسٹیشنزپراجیکٹ کی افتتاحی تقریب کی تیاریوں سے متعلق امور زیر بحث آئے۔اے آئی جی ڈویلپمنٹ حسن اقبال نے اجلاس میں (سپیشل انیشئیٹو) ماڈل پولیس اسٹیشنز کے متعلق بریفنگ دیتے ہوئے بتایاکہ ابتدائی مرحلے میں میانوالی سمیت مختلف اضلاع کے 29تھانوں کو سپیشل انیشئیٹوپولیس اسٹیشنزکے طور پر اپ گریڈ کیا گیا ہے اور پراجیکٹ کا بنیادی مقصدشہریوں کی بہتر اور سہولات کی بروقت و باآسانی فراہمی کو یقینی بنانا ہے۔ جدید ٹیکنالوجی کے موثر استعمال سے عوامی سہولت کیلئے اپ گریڈ کئے گئے ماڈل تھانوں کی عمارت کو دو حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔فرنٹ اینڈ میں دوستانہ ماحول کے ساتھ جدید ٹیکنالوجی سے آراستہ پولیس کاؤنٹر اور ویٹنگ روم بنائے گئے ہیں ور عوام کی سہولت کیلئے مصالحتی کمیٹی روم، ایس ایچ او روم اور میٹنگ ہال بھی تھانے کے فرنٹ حصے میں موجود ہونگے جبکہ تھانے کے ورکنگ امور سے متعلقہ شعبوں محرر روم،تفتیشی افسران کے کمرے، مانیٹرنگ اینڈ اوپس روم اور حوالات کو عقبی حصے میں رکھا گیا ہے۔

مزید : علاقائی