وزیراعلٰی سندھ کی اورنج لائن بس منصوبہ تین ماہ میں مکمل کرنے کی ہدایت 

وزیراعلٰی سندھ کی اورنج لائن بس منصوبہ تین ماہ میں مکمل کرنے کی ہدایت 

  



 کراچی(اسٹاف رپورٹر)وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو ہدایت کی ہے کہ اورنج لائن پروجیکٹ  آئندہ چار ماہ کے اندر مکمل کریاور ریڈ لائن کو ٹینڈر کے مراحل کے لیے  تیار کیا جائے جسکے لیے وہ چاہتے ہیں کہ اسکی سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب 14 اگست کو انجام دی جائے۔ انہوں نے یہ ہدایات جمعہ کے روز وزیر اعلی ہاس میں بی آر ٹی ایس، اورنج لائن اور ریڈ لائن کی پیشرفت کا جائزہ لینے کے لئے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے جاری کیں۔ اجلاس میں وزیر ٹرانسپورٹ اویس قادر شاہ، وزیر بلدیات ناصر حسین شاہ، وزیراعلی سندھ کے مشیر مرتضی وہاب، قائم مقام چیف سکریٹری محمد وسیم، وزیراعلی سندھ کے پرنسپل سیکریٹری ساجد جمال ابڑو، سیکریٹری لوکل گورنمنٹ روشن شیخ، سیکرٹری ٹرانسپورٹ عباس ڈیتھو، ایم ڈی پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ یونٹ  خالد شیخ و دیگر نے شرکت کی۔  وزیر ٹرانسپورٹ اویس شاہ نے وزیر اعلی سندھ کو بریفنگ دیتے ہوئے کہا کہ اورنج لائن پر جاری کام تقریبا آخری مراحل میں ہے۔ اس پر وزیر اعلی سندھ نے انہیں ہدایت کی کہ وہ اسے اگلے تین ماہ کے اندر مکمل کریں اور اسی کے ساتھ ساتھ بسوں کی خریداری   اورابتدائی طور پر  25 بسوں کی خریداری کا طریقہ وضع کیا جائے۔انھوں نے کہا کہ  میں چاہتا ہوں کہ بہترین بسیں خریدیں جائیں جن میں بیٹھنے کی گنجائش 40 مسافروں کی ہو،80 مسافر کھڑے ہونے کی گنجائش یا مزید بڑی بسیں جوکہ  ڈبل گنجائش کے حامل ہوں خرید کی جائیں۔ صوبائی وزیر ٹرانسپورٹ کی ہدایت کی کہ وہ اس حوالے سے تجاویز کو حتمی شکل  دیں۔ انہوں نے وزیر ٹرانسپورٹ کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ  گرین لائن پروجیکٹ مینجمنٹ / وفاقی حکومت سے بات کریں تاکہ یکساں اور مشابہت کی حامل گنجائش والی بسیں خریدی جاسکیں۔ وزیراعلی سندھ نے کہا کہ وہ پہلے ہی نمائش میں انڈر پاس اور میزنائین فلور کی تعمیر کے لئے 962 ملین روپے کی منظوری دے چکے ہیں، محکمہ خزانہ نے معاملہ کابینہ کی ذیلی کمیٹی کو بھیج دیا ہے جو رقم جاری کرنے کے لئے اپنی رپورٹ پیش کرے گی۔ایک سوال کے جواب میں  وزیر اعلی سندھ  کو بتایا گیا کہ سرجانی ٹان میں گرین لائن بس ڈپو کے لئے زمین منصوبے کے نام پر منتقل کردی گئی ہے جسکا محکمہ بلدیات پیر تک نوٹیفکیشن جاری کرے گا۔وزیر اعلی سندھ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو اورنج لائن پر کام مکمل کرنے کی ہدایت کی تاکہ اگلے تین سے چار ماہ کے اندر اس کا آغاز کیا جاسکے، انہوں نے وزیر ٹرانسپورٹ کو بسوں کی خریداری کا طریقہ کار شروع کرنے کی ہدایت کی اور ابتدائی طور پر اورنج لائن کے لئے 25 بسیں خریدی جاسکتی ہیں۔وزیراعلی سندھ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو گرین لائن پروجیکٹ مینجمنٹ کے ساتھ سہولت کے عملدرآمد کرنے کے معاہدے کی ہدایت کی، اس منصوبے کو وفاقی حکومت تین سال تک چلائے گی اور اس کے بعد عملا جاری رکھنے کے لئے اسے حکومت سندھ کو منتقل کردیا جائے گا۔وزیراعلی سندھ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو ہدایت کی کہ وہ ٹرک ڈپو  کو ماڑی پور سے ناردرن بائی پاس منتقل کرنے کے انتظامات کریں اور سپر ہائی وے پر انٹر سٹی بس ٹرمینل کی تعمیر کے لئے بورڈ آف روینیو(BOR) سے ایک سو ایکڑ اراضی منتقل کی جائے۔ بھینس کالونی میں بائیو گیس پلانٹ کیلئے اراضی کے حصول کا معاملہ پر کراچی بس ریپڈ ٹرانزٹ کے تحت بھینس کالونی میں ریڈ لائین کی تنصیب بھی زیر بحث لایا گیا۔وزیراعلی سندھ نے کہا کہ بھینس کالونی میں بائیو گیس پلانٹ سب سے زیادہ قابل عمل ہوگا کیونکہ بائیو گیس کی پیداوار کے لئے مویشیوں کے گوبر کا استعمال آسان ہوگا۔وزیر بلدیات سید ناصر شاہ نے بتایا کہ یہ اراضی کے ایم سی کی ہے جسکے لیے  وہ میئر کراچی سے بات کریں گے اور  شہر کیایک منصوبے ریڈ لائن بائیو گیس پلانٹ کے لئے  40 ایکڑ اراضی مختص کریں گے۔وزیراعلی سندھ کو بتایا گیا کہ ریڈ لائن منصوبے کے لئے ٹینڈر دستاویز تیار ہوچکے ہیں جنھیں ایک ماہ میں پیش کردیا جائے گا۔تاہم، اس منصوبے کے لئے ایک نگران کنسلٹنٹ کی تقرری کا اشتہار جاری کیا گیا ہے۔وزیراعلی سندھ نے محکمہ ٹرانسپورٹ کو بتایا کہ وہ 14 اگست 2020 کو ریڈ لائن منصوبے کی سنگ بنیاد کی تقریب انجام دیں گے لہذہ محکمہ ٹرانسپورٹ کو تمام زیر التوا کاموں کو اسی کے مطابق تیز کرنا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ کراچی کے عوام کی اصل خدمت اسٹیٹ آف آرٹ  بی آر ٹی کے آغاز اور ٹرانسپورٹ کے مسائل حل  ہوجائیں گے۔

مزید : صفحہ اول