چھوٹے جاندار زمین کی تہہ میں بھی زندہ رہ سکیں گے،تحقیق

چھوٹے جاندار زمین کی تہہ میں بھی زندہ رہ سکیں گے،تحقیق

                                    لندن(این این آئی)سائنس دانوں کا ماننا ہے کہ کرہ ارض پر سب سے آخر تک زندہ رہنے والے بہت ہی چھوٹے جاندار زمین کی تہہ میں بھی زندہ رہ سکیں گے۔محقیقین نے لندن میں کی گئی ایک تحقیق میں کہاکہ اب سے اربوں برس کے بعد کے کر ہ ارض کی تقدیر کا اندازہ لگانے کے لیے کمپیوٹر ماڈل کا استعمال کیا گیا تو انہیں معلوم ہوا کہ وقت کے ساتھ ساتھ سورج کی تپش اور چمک بڑھتی جائے گی اور اس سخت ترین شمشی تبدیلیوں کو صرف نہایت چھوٹے جاندار برداشت کر پائیں گے۔سکاٹ لینڈ میں یونیورسٹی آف سینٹ اینڈریو کے جیک او مالے جیمز کا کہنا ہے اس وقت آکسیجن زیادہ موجود نہیں ہوگی تو انہیں زیر زمین یا بغیر آ کسیجن کے ماحول، بہت زیادہ دبا اور سمندروں میں تبخیر کے سبب بہت زیادہ نمک زدہ ماحول میں زندہ رہنے کے لائق بنانے کی ضرورت ہوگی۔کر ارض پر زندگی کا دار و مدار آفتاب پر منحصر ہے اور وقت گزرنے کے ساتھ ہی ہمارے ستارے زیادہ درخشاں ہوجائیں گے۔ سائنس دانوں نے زمین پر مستقبل کے ماحول کی پیشین گوئی کے لیے اسی حقیقت کا استعمال کیا ہے۔ان کے مطابق ایک ارب سال بعد سورج کی گرمی اس قدر سخت ہوجائے گی کہ سمندر کا پانی بخارات بن کر اڑنے لگے گا۔سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ یہی وہ ذی حیات ہوگی جو اس وقت کی شدید گرمی اور زمین کے زہر آلود ماحول کو برداشت کر سکے گی۔

مزید : عالمی منظر