مشرف کیخلاف اب آرٹیکل چھ کے تحت کارروائی ہوتی نظر نہیں آتی: اعتزاز احسن

مشرف کیخلاف اب آرٹیکل چھ کے تحت کارروائی ہوتی نظر نہیں آتی: اعتزاز احسن

    لاہور(آئی این پی) قائد حزب اختلاف برائے سینیٹ چودھری اعتزاز احسن نے کہا ہے کہ پرویز مشرف کے خلاف اب آرٹیکل 6 کے تحت کارروائی ہوتی نظر نہیں آتی۔ پرویز مشرف کو پاکستان سے لیجانے کیلئے قطر میں طیارہ تیار کھڑا ہے، سپریم کورٹ میاں نواز شریف کے درمیان کچھ کیلیبریشن نظر آتی ہے۔ سپریم کورٹ کی ازخود نوٹس کیلئے کوئی حد ہونی چاہئے، سپریم کورٹ نے بہت سے غلط فیصلے کئے ازخود نوٹس کی وجہ سے اپیل کا حق ختم ہوجاتا ہے، این آر او پر عملدرآمد کیلئے سپریم کورٹ کا بنچ بن سکتا ہے تو اصغر خان کیس پرعملدرامد کیلئے سپریم کورٹ 9 ماہ سے کیوں خاموش ہے اس پر کیوں نہیں بنچ بنایا جاتا؟ ڈاکٹر بابر اعوان، فاروق ایچ نائیک اور سردار لطیف خان کھوسہ نے صدر آصف زرداری کو مشورہ دیا تھا کہ چیف جسٹس افتخار محمد چودھری کی بحالی غیر آئینی ہوگی۔ بدھ کے روز اپنے ایک ٹی وی انٹرویو میں چوہدری اعتزاز احسن نے کہا کہ پرویز مشرف کے خلاف آرٹیکل چھ کے حتح کارروائی کیلئے میاں نوکاز شریف کا قومی اسمبلی میں دیئے جانے والا بیان انتہائی اہم ہے لیکن سپریم کورٹ کے فیصلے اور حکومت کی جانب سے کمیٹی کے قیام کے بعد پرویز مشرف کے خلاف آرٹیکل چھ کے تحت کارروائی ہوتی نظر نہیں آرہی لیکن اگر ہم ترکی، بنگلا دیش اور سری لنکا سمیت جہاں بھی فوجی آمروں کے خلاف کارروائی ہوئی وہاں جمہوریت کمزور نہیں بلکہ مضبوط ہوئی ہے۔

اعتزاز احسن

مزید : صفحہ اول