امریکہ نے اسرائیل کو فوجی امداد بڑھانے کی پیشکش کر دی

امریکہ نے اسرائیل کو فوجی امداد بڑھانے کی پیشکش کر دی
امریکہ نے اسرائیل کو فوجی امداد بڑھانے کی پیشکش کر دی

  

واشنگٹن (ویب ڈیسک) امریکہ نے اسرائیل کی فوجی امداد بڑھانے کی پیشکش کردی ہے ۔امریکہ کی جانب سے اسرائیل کو فوجی امداد دینے کا 10 سالہ معاہدہ 2018 ءمیں ختم ہو رہا ہے۔ دونوں ملکوں میں اگلے 10 سال کیلئے نئے معاہدے کیلئے مفاہمتی یادداشت کے حوالے سے بات چیت جاری ہے۔ اسرائیل کی جانب سے ڈومیسٹک کے بجائے امریکی اشیا پر زیادہ فنڈز خرچ کرنے کی شرط پر امریکہ نے اگلے 10 سالوں کیلئے اسرائیل کو دی جانیوالی حالیہ فوجی امداد میں اضافے کی پیشکش کر دی ہے۔

امریکی پیشکش میں اسرائیل کو دی جانیوالی 30 ارب ڈالر کی امداد میں اضافے کا کہا گیا ہے اور اگلے 10 سال کیلئے معاہدے کے عزم کا بھی اظہار کیا گیا ہے۔ نیویارک ٹائمز کی رپورٹ کے مطابق اگلے دس سال کے معاہدے کی رقم 40 ارب ڈالر ہو سکتی ہے ۔ اس ڈیل میں اسرائیل کے میزائل ڈیفنس سسٹم کیلئے مزید فنڈز کے عزم کا اظہار کیا جائیگا۔ واضح رہے امریکہ اسرائیل کے تینوں میزائل ڈیفنس نظاموں میں تعاون کر رہا ہے۔

اسرائیل کے میزائل ڈیفنس سسٹم آئرن ڈوم‘ ابرو اور ڈپوڈز سلنگ ہیں۔ صہیونی وزیراعظم نیتن یا ہو میزائل ڈیفنس سسٹم کیلئے مزدی امداد کے خواہاں ہیں ۔ جاری معاہدے کے تحت اسرائیل ملنے والی امداد کا 25 فیصد امریکہ کے باہر خرچ کر سکتا ہے اور مزید 13 فیصد اپنے طیاروں کے ایندھن کیلئے خرچ کر سکتا ہے۔ اسرائیل کے دفاعی سسٹم کی تعمیر کیلئے جائے جانے والے ان معاہدوں کے ذریعے اسرائیل اسلحہ برآمد کرنے والے 10 بڑے ممالک میں شامل ہو گیا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -