کاشتکار کپاس کی زیادہ پیداوار کیلئے خوراکی پودوں کا بروقت تدارک کریں ، ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ

کاشتکار کپاس کی زیادہ پیداوار کیلئے خوراکی پودوں کا بروقت تدارک کریں ، ایوب ...

  

فیصل آباد (آن لائن) ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد کےِ ماہر شعبہ اگرانومی عباس علی گل نے کاشتکاروں کوہدایت کی ہے کہ وہ کپاس کی زیادہ پیداوار کے حصول کے لیے جڑی بوٹیوں اور دوسرے میزبان خوراکی پودوں کا بروقت تدارک ضروری ہے کیونکہ ان پر سفید مکھی کا حملہ سار اسال جاری رہتا ہے۔ سفید مکھی کی افزائش اورکپاس کی فصل پرمنتقلی سے پتہ مروڑ وائرس کا حملہ ہوسکتا ہے ۔

سفید مکھی کے میزبان پودوں میں بھنڈی، تمباکو، آلو، بینگن، حلوہ کدو، کھیرا ، تر ، کریلا ، ٹماٹر ،لیہلی ، ٹینڈا ، تربوز ، خربوزہ ،سورج مکھی، کرنڈ ، مرچ ، گارڈینا اور لینٹانا زیادہ اہم ہیں۔کپاس کی فصل میں مناسب وقت پر ٹریکٹر سے ہل یاجڑی بوٹیوں کی تلفی کے لیے تیار کردہ مخصوص روٹا ویٹر چلا کر ان جڑی بوٹیوں کو تلف کریں۔گر م اور خشک موسم میں کپاس کی فصل پر سفید مکھی کا حملہ بڑھ سکتا ہے ۔سفید مکھی کے بالغ اور بچے رس چوس کر پودے کو کمزور کردیتے ہیں ۔ رس چوسنے کے علاوہ سفید مکھی میٹھا لیسدار مادہ بھی خارج کرتی ہے جس پر سیا ہ رنگ کی اُلی لگ جانے سے پودے کے حملہ شدہ حصے سیاہ ہوجاتے ہیں۔ کاشت کار فصل کی ہفتہ میں دوبار پیسٹ سکاؤٹنگ کریں۔ پانچ بالغ یا بچے فی پتہ یا دونوں ملا کر پانچ فی پتہ سفید مکھی معاشی نقصان کی حد ہیں۔معاشی نقصان کی حد تک پہنچنے کی صورت میں سفید مکھی کے تدارک کے لیے محکمہ زراعت کے مقامی عملہ کی سفارش کردہ زہروں کا سپرے کریں۔

مزید :

کامرس -