وادی کشمیر میں بھی شب قدر کی مقدس تقریبات عقیدت و احترام کے ساتھ منائی گئیں

وادی کشمیر میں بھی شب قدر کی مقدس تقریبات عقیدت و احترام کے ساتھ منائی گئیں

  

سری نگر(کے پی آئی)دنیا کے دیگر حصوں کے ساتھ ساتھ وادی کشمیر میں بھی شب قدر کی مقدس تقریبات عقیدت و احترام کے ساتھ منائی گئیں اوراس موقعہ پر تاریخی جامع مسجد،درگاہ حضرتبل اور وادی کی دیگر تمام مساجد و خانقاہوں میں روح پرور اجتماعات کا انعقاد ہوا جن میں لاکھوں فرزندان توحید بشمول خواتین کی ایک بڑی تعدا دنے خشوع و خضوع کے ساتھ شرکت کی۔ کے پی آئی کے مطابق اس دوران فرزندان توحید رات بھر اللہ کے حضور سربسجود رہے اوررب کائنات سے اپنے گناہوں اور خطاں کیلئے در گذر طلب کیا۔ اس موقعہ پرخصوصی دعائیں بھی مانگی گئیں جس کے دوران رقعت آمیز مناظر بھی دیکھنے کو ملے۔ عقیدتمندوں کی زبانوں سے جاری اللہ اکبرکے فلک شگاف ورد کی وجہ سے تاریخی جامع مسجد اور درگاہ حضرت بل کا پورا علاقہ رات بھر گونجتا رہا۔ شب قدر کے سلسلے میں سب سے بڑی تقریب تاریخی جامع مسجد سرینگر اورآثار شریف حضرتبل درگاہ میں منعقد ہوئی جہاں وادی کے اطراف و اکناف سے آئے لاکھوں فرزندان توحید نے شب خوانی کی جس کے دوران درود و اذکار ، ختمات المعظمات اور توبہ استغفار کی خصوصی محفلیں آراستہ کی گئیں۔ شب قدر کے سلسلے میں تمام مساجدوں، خانقاہوں اور زیارت گاہوں کو سجایا گیا تھا اور انتظامیہ کی طرف سے زائرین کو ہر ممکن سہولیت فراہم کرنے کے لئے بہتر انتظامات کئے گئے تھے۔

درگاہ حضرتبل میں رات بھر درود و اذکار کی محفلیں آراستہ ہوئیں اور رات بھر فرزندان توحید نے اپنے گناہوں کی بخشش طلب کی۔ حضرتبل کے راستوں کو سجانے کے ساتھ ساتھ درگاہ میں چراغاں کیا گیا تھااور رات بھر فرزندان توحید جن میں خواتین کی ایک بڑی تعداد شامل تھی نے پوری رات بیدار رہ کر اسلام کی سربلندی، کفر و شرک کے خاتمے، خوشحالی اور ریاست میں امن بھائی چارے کو قائم رکھنے کے لئے دعائیں کیں۔ وادی کے اطراف و اکناف سے آئے ہوئے عقیدت مندوں کو لینے اور لیجانے کے لئے انتظامیہ نے پیشگی انتظامات کئے تھے جبکہ حضرتبل کے گرد نواح میں زائرین کو سہولیت بہم پہنچانے کے لئے طبی کیمپ لگائے گئے تھے جبکہ کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لئے عملے کو چوکنا کردیا گیا تھا۔جامع مسجد سرینگر میں بھی شب قدر کے سلسلے میں بڑی تقریب منعقد ہوئی جہاں حریت چیئرمین اور میرواعظ کشمیر مولوی عمر فاروق نے شب القدرکی فضیلت اور اہمیت پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔ خانیار میں قائم پیر دستگیر صاحب کی زیارت کو سجایا گیا تھا جبکہ جگہ جگہ چراغاں کیا گیا تھا۔ زیارت شریف میں ہزاروں فرزندان توحید نے رات بھر شب بیدار رہ کر اپنے گناہوں کی بخشش طلب کی ۔ زیارت حضرت سلطان العارفینمخدوم صاحب، جناب صاحب صورہ، آثار شریف کلاش پورہ ، مسجد اقرا سرائے بالا، پیر دستگیر صاحبسرائے بالا،سید یعقوب صاحبسونہ وار، سید شاہ نعمت اللہ قادریصفا کدل، بلبل شاہ صاحب، خانقاہ معلی سرینگر،حضرت شیخ العالم شیخ نور الدین نورانی چرار شریف ، کھرم سرہامہ، اہم شریف بانڈی پورہ، پکھرپورہ، بابا ریشی ،خانقاہ فیض پناہ ترال ، خانقاہ معلی بارہمولہ، جامع مسجد سوپورکے علاوہ ریاست کے مختلف علاقوں میں خانقاہوں اور مساجد میں شب خوانی کی گئی جبکہ کئی خانقاہوں میں خواتین کی بھی بڑی تعداد شب خوانی میں محورہی۔ اس کے علاوہ گھروں میں بھی کئی لوگ پوری رات بارگاہ ایزدی میں سربسجود رہے۔ وادی کے دیگر اضلاع اور قصبہ جات جن میں آثار شریف پنجورہ شوپیان ، پلوامہ ، کولگام ، اننت ناگ ، بارہمولہ ،کپوارہ اور ہندوارہ شامل ہیں ،میں بھی لوگوں نے مساجدمیں شب خوانی کرکے پوری رات مساجد میں گذار ی۔کعبہ مرگ اننت ناگ اور خانقاہ فیض پناہ ڈورو ویری ناگ میں بھی اس سلسلہ میں روح پرور مجالس کا اہتمام کیا گیا۔ اس کے علاوہ شہر کے دیگر علاقوں میں بھی مساجد اور درگاہوں میں شب قدر کے سلسلے میں رات بھر لوگوں نے شب خوانی کی۔شب قدر کے موقعہ پر منعقد کی گئی تقریبات میں ائمامساجد نے تفصیل کے ساتھ فلسفہ شب قدر پر روشنی ڈالی جبکہ ان روح پرمجالس میں وادی میں امن وآشتی کیلئے خصوصی دعائیں مانگی گئیں۔

مزید :

عالمی منظر -