بدترین لوڈشیڈنگ ، سپریم کورٹ واپڈا کے خلاف از نوٹس لے ، مولانا بخش چاڈیو

بدترین لوڈشیڈنگ ، سپریم کورٹ واپڈا کے خلاف از نوٹس لے ، مولانا بخش چاڈیو

  

 کراچی (اسٹاف رپورٹر)وزیراعلیٰ سندھ کے مشیر برائے اطلاعات مولا بخش چانڈیو نے سپریم کورٹ آف پاکستان سے اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ واپڈا کے خلاف فوری طور پر ازخود نوٹس لے کیونکہ سندھ بھر میں 16سے 18گھنٹوں تک لوڈشیڈنگ کی جاری ہے جو کہ انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت طویل اور ناقابل برداشت بجلی کی لوڈشیڈنگ کی شکایات سننے کو بھی تیار نہیں، اس لیے ہم سپریم کورٹ سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ واپڈا کے خلاف سخت سے سخت ایکشن لے تاکہ سندھ کے لوگوں کو لوڈشیڈنگ کے عذاب سے چھٹکارہ حاصل ہو سکے۔انہوں نے مزید کہا کہ لوگوں کو رمضان المبارک کے دوران، عید سے قبل اور بعد کے دنوں میں بلا تعطل بجلی کی فراہمی کی ضرورت ہے۔تاہم اس مسئلے کے حوالے سے ہم نے سپریم کورٹ سے مدد طلب کی ہے کیونکہ سندھ بھر میں اس وقت شدید لوڈشیڈنگ کا سامنا ہے۔واپڈا ، حیسکو اور سیپکو کی جانب سے سندھ کے دیہی علاقوں میں16سے 18 گھنٹوں کی لوڈ شیڈنگ کی جاری ہے جبکہ شہری علاقے بھی بدترین لوڈشیڈنگ کے کرب سے گزر رہے ہیں، جو کہ غیر منصفانہ عمل ہے۔لہٰذ ا یہ وقت کی ضرورت ہے کہ اعلٰی عدلیہ طویل لوڈشیڈنگ کے معاملے کا نوٹس لے۔ مولابخش چانڈیو نے مزید کہا کہ رمضان المبارک کے باوجود کراچی بھر میں طویل لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے، کے الیکٹرک کی جانب سے عوام کو اضافی بل بھیجے جا رہے ہیں اور ان اضافی بلوں کی عدم ادائیگی کی صورت میں بجلی کی فراہمی منقطع کی جا رہی ہے۔ انہوں نے کے الیکٹرک کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ وہ لو گوں کو اضافی بلزاور لوڈشیڈنگ سے گریز کرے ، بصورت دیگر متعلقہ حکام کی جانب سے سخت اقدامات اٹھائے جائیں گے۔مولا بخش چانڈیو نے کہا کہ اکثر علاقوں میں کسی ایک گھر کی جانب سے بجلی کا بل نہ جمع کروانے پر واپڈا اہلکار پورے علاقے کا ٹرانسفارمر اتار کر لے جاتے ہیں اور کئی کئی دنوں تک ٹرانسفارمر نہیں لگایا جاتا جو کہ آئیں و قانون اور انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔ وفاقی حکومت نے بجلی کی وزارت ایک ایسے شخص کے ہاتھ میں دے دی ہے جس کی پالیسیوں کی وجہ سے سندھ کے لاکھوں و کروڑوں لوگوں کو اذیت دی جارہی ہے۔انہوں نے کہا کہ میری عوام سے گزارش ہے کہ جہاں بھی ٹرانسفارمر اتار کر لے جانے والا واقعہ پیش آئے یا خدانا نخوستہ لوڈ شیڈنگ کی وجہ سے ان کے گھر میں کو ئی فرد موت کا شکار ہوجائے تووہاں کے تھانے پر متعلقہ بجلی فراہم کرنے والے ادارے کے متعلقہ افسران کے خلاف ایف آئی آر درج کروائی جائے جبکہ غیر منصفانہ لوڈ شیڈنگ ، بریک ڈاؤان اور اضافی بلوں کے متعلق شکایات وفاقی اور سندھ محتسب میں درج کروائیں۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ سے اپیل ہے کہ سارے معاملے کا ازخود نوٹس لے کر سندھ کی عوام کو مسلم لیگ ن کی وفاقی حکومت کی اذیتوں سے بچایا جائے۔انہوں نے مزید کہا کہ وفاقی حکومت ،واپڈا اور کے الیکٹرک رمضان المبارک میں لوڈشیڈنگ کم کرنے کا وعدہ پورا کرنے میں بری طرح ناکام ہو چکے ہیں اورڈر ہے کہ عید کے موقعے پر بھی کہیں یہی روش جاری نہ رکھیں۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -