کارکنان کو ملازمتوں سے برطرف کرنے کا منصوبہ بنایا جارہا ہے، ایم کیو ایم

کارکنان کو ملازمتوں سے برطرف کرنے کا منصوبہ بنایا جارہا ہے، ایم کیو ایم

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر) متحدہ قومی موومنٹ کی رابطہ کمیٹی نے رینجرزکی جانب سے سرکاری ونیم سرکاری محکموں سے ایم کیوایم اوراس کی حمایت یافتہ یونینوں کے دفاتر ختم کرنے اور ایم کیوایم کے کارکنوں اور ہمدردوں کوملازمتوں سے برطرف کرنے کے ظالمانہ احکامات کی شدیدالفاظ میں مذمت کی ہے اوران احکامات کوایم کیوایم اور مہاجروں کے سیاسی و معاشی قتل کے احکامات قراردیاہے۔ ایک بیان میں رابطہ کمیٹی نے کہا کہ پہلے علاقوں میں ایم کیوایم کے دفاترپرمسلسل چھاپے مار کر اور بڑے پیمانے پرکارکنوں کی گرفتاریاں کرکے ایم کیوایم کے علاقائی دفاتربندکرائے گئے اور اب تمام سرکاری ونیم سرکاری اداروں میں ایم کیوایم اوراس کی حمایت یافتہ ورکرزیونینوں کے دفاتربندکرنے کے احکامات جاری کئے گئے ہیں۔اس کے ساتھ ساتھ تمام اداروں کے حکام کوحکم دیاگیاہے کہ ایم کیوایم کے کارکنوں اورہمدردوں کوملازمتوں سے برطرف کردیاجائے ۔ساتھ ساتھ جوکارکنان ماورائے عدالت قتل اورگرفتاریوں سے بچنے کیلئے ملازمتوں پر جانے سے قاصرہیں انہیں بھی گھوسٹ ملازم کہہ کرملازمتوں سے نکالاجارہاہے ۔ رابطہ کمیٹی نے کہاکہ کراچی کے مختلف علاقوں میں کالعدم عسکری تنظیموں نے اپنے دفاترقائم کررکھے ہیں، ان کالعدم تنظیموں سے وابستہ افرادکھلے عام اپنی سرگرمیاں انجام دے رہے ہیں، شہر کے بازاروں اورمساجد کے باہر کھلے عام زکوٰۃ فطرہ اورچندہ جمع کررہے ہیں لیکن ان کی سرگرمیوں پر کسی قسم کی کوئی روک ٹوک نہیں ہے جبکہ ایم کیوایم کے کارکنوں کوبڑے پیمانے پرگرفتارکرکے لاپتہ کیا جارہا ہے، ایم کیوایم کے رہنماؤں ، منتخب نمائندوں اور کارکنوں پر جھوٹے مقدمات قائم کیے جارہے ہیں اوراب سرکاری ونیم سرکاری محکموں سے ایم کیوایم اور اس کی حمایت یافتہ یونینوں کے دفاتر بند کرنے اورایم کیوایم کے کارکنوں اورہمدردوں کوملازمتوں سے برطرف کرنے کے ظالمانہ احکامات جاری کیے گئے ہیں۔ رابطہ کمیٹی نے کہاکہ ایم کیوایم کوکچلنے کیلئے اب مہاجروں کے سیاسی اور جسمانی قتل عام کے بعد اب معاشی قتل عام کاسلسلہ بھی شروع کردیاگیاہے اور سرکاری اداروں پر دباؤ ڈالا جارہا ہے کہ ایم کیوایم کے کارکنان وہمدردوں کو ان کی ملازمتوں سے برطرف کیاجائے ۔رابطہ کمیٹی نے کہاکہ قوم کو بتایا گیا تھا کہ کراچی میں قیام امن کیلئے آپریشن کیاجارہاہے لیکن رینجرزکے ان تازہ ظالمانہ احکامات نے ایک بارپھر ثابت کردیاہے کہ اس آپریشن کااصل مقصد کراچی میں قیام امن نہیں بلکہ صرف اور صرف ایم کیوایم کو سیاسی طورپرختم کرنا اور مہاجروں کوسیاسی، معاشی اورمعاشرتی طورپرکچلناہے ،انہیں ان کے سیاسی، جمہوری ، آئینی قانونی حق سے محروم کرنا اوران کے سیاسی ومعاشی حق پر ڈاکہ ڈالنا ہے ۔ رینجرز کے یہ اقدامات مہاجروں کا کھلا معاشی قتل ہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔رابطہ کمیٹی نے کہاکہ ایم کیوایم کوکچلنے کیلئے پوری ریاستی طاقت استعمال کرنے والے اس بات کاجواب دیں کہ کراچی میں رینجرزکی ناک کے نیچے کالعدم عسکری تنظیمیں کس طرح آزادی کے ساتھ زکوٰۃ فطرہ جمع کر رہی ہیں اور اپنی سرگرمیاں انجام دے رہی ہیں؟ ایم کیوایم کوسیاسی طورپرکچل کراورکالعدم عسکری تنظیموں کو آزادی فراہم کرکے ضرب عضب کیوں ناکام بنائی جارہی ہے؟رابطہ کمیٹی نے وزیراعظم محمد نواز شریف ،چیف آف آرمی اسٹاف جنرل راحیل شریف اور وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثارعلی سے مطالبہ کیاکہ رینجرز کی جانب سے سرکاری ونیم سرکاری محکموں سے ایم کیوایم اوراس کی حامی یونینوں کے دفاتر ختم کرنے اورایم کیوایم کے کارکنوں کوملازمتوں سے برطرف کرنے کے ظالمانہ احکامات کا فوری نوٹس لیاجائے اور مہاجروں کے معاشی قتل عام کا سلسلہ فی الفور بند کرایا جائے ۔ رابطہ کمیٹی نے انسانی حقوق کی تنظیموں سے بھی اپیل کی کہ وہ ان غیرقانونی، غیرآئینی اورظالمانہ احکامات کے خلاف آوازبلندکریں۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -