افغانستان کی ٹرانسپورٹ مافیا نے پاک افغان دوستی بس سروس معطل کر دی :حاجی نصیر

افغانستان کی ٹرانسپورٹ مافیا نے پاک افغان دوستی بس سروس معطل کر دی :حاجی نصیر

  

خیبر ایجنسی ( بیورورپورٹ)افغانستان کی ٹرانسپورٹ مافیا نے پاک افغان دوستی بس سروس معطل کر دی ہے ، ہزاروں افغان مرد و خواتین اور بچے پا ک افغان دوستی بس سروس کے ذریعے سفر کرنے سے محروم کر دےئے گئے ، عید الفطر کی آمد پر بس سروس معطل کرنا سمجھ سے بالاتر ہے ،حاجی نصیر خان، مینیجنگ ڈائریکٹر پاک افغان دوستی بس سروس کی میڈیا سے گفتگو ۔ پاک افغان دوستی بس سروس کے مینیجنگ ڈائریکٹر حاجی نصیر خان نے کہا کہ افغان حکومت نے کچھ افغان ٹرانسپورٹ مافیا کے دباؤ پر تیس مئی سے پاک افغان دوستی بس سروس معطل کر دی ہے جب سے طورخم بارڈر پر افغانوں کے لئے پاسپورٹ اور ویزے کی شرط لاگو کر دی گئی ہے اور اس کی ایک وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ پاکستان نے پانچ میں سے تین بس سروسزپاک افغان اتحاد ، مصطفی یاران اور خبر کامران کو سیکیورٹی کلئیرنس سرٹییفیکیٹس دینے اور بسیں چلانے سے انکار کر دیا حاجی نصیر خان کے مطابق انہی کچھ ٹرانسپورٹ مافیا کے دباؤ پر افغان حکومت نے یونائیٹیڈ ٹرانسپورٹ کمپنی المعروف پاک افغان دوستی بس سروس کو معطل کر دیا انہوں نے کہا کہ مذکورہ بس سروس کا آغاز 2006 میں کیا گیا تھا اور کہا کہ مزکورہ بس سروس میں روزانہ ایک طرف سے دو سو پچاس سواریوں کو لیکر جاتے تھے اور اس سروس کے ذریعے سفر کرنے والے طورخم بارڈر پر پاسپورٹ، شناختی کارڈز یا دیگر سفری دستاویزات پیش کرتے تھے اور اس طرح با آسانی سفر کیا کرتے تھے انہوں نے کہا کہ باقی دو کمپنیوں کے ساتھ سات سات بسیں اور فلاینگ کوچز شامل ہیں پاک افغان دوستی بس سروس معطل کرنے سے افغان حکومت نے اپنے ہی شہریوں کی مشکلات میں اضافہ کر دیا ہے حاجی نصیر خان نے کہا کہ افغان حکومت کو عید الفطر کے موقع پر بس سروس چلانے کی اجازت دینی چاہئے تاکہ اس سروس سے ہزاروں لوگ مستفید ہو سکے طورخم سے ذرائع نے بتایا کہ مذکورہ بس سروس کی انتظامیہ سے طورخم بارڈر پر متعین کچھ متفرق خاصہ دار فورس کے کمانڈر ہزاروں روپے آنے جانے کے وقت لیا کرتے تھے اور اس طرح غیر مقامی خاصہ دار فورس کے کمانڈرنے اس سروس سے لاکھوں روپے ناجائز طور پر بٹورلئے ہیں جن کو طورخم سے بے دخل کرنے کی ضرورت ہے تاکہ پاکستانی طورخم میں کوئی ملک کی بدنامی کا سبب نہ بن سکے ۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -