جب ہم نے فلسطینیوں پر ظلم کے پہاڑ توڑے تو بھارت یہ کام کر رہا تھا، اسرائیلی میڈیا نے بھارت کا پول کھول دیا

جب ہم نے فلسطینیوں پر ظلم کے پہاڑ توڑے تو بھارت یہ کام کر رہا تھا، اسرائیلی ...
جب ہم نے فلسطینیوں پر ظلم کے پہاڑ توڑے تو بھارت یہ کام کر رہا تھا، اسرائیلی میڈیا نے بھارت کا پول کھول دیا

  

تل ابیب (مانیٹرنگ ڈیسک) جس طرح کشمیر میں ہونے والے بھارتی مظالم پر اسرائیل خاموشی اختیار کئے رکھتا ہے بلکہ اس ظلم میں بھارت کی مدد بھی کرتا ہے، اسی طرح جب اسرائیل فلسطینیوں پر ظلم کرتا ہے تو عالمی برادری کے دیگر ممالک کے برعکس بھارت ہمیشہ خاموشی اختیار کئے رکھتا ہے۔ غاصبانہ قبضے اور آزادی کی تحریکوں کو دبانے میں ان دونوں ممالک کا رویہ ایک جیسا ہے اور دونوں اس پر شرمندہ ہونے کی بجائے فخر کرتے ہیں۔ وزیراعظم نریندر مودی کا اسرائیل کا دورہ شروع ہو چکا ہے اور اس دورے کے شروع ہونے سے پہلے ہی اسرائیلی میڈیا نے بھارت کی اس ’خوبی‘ کا چرچا شروع کر دیا۔

اسرائیلی میڈیا میں شائع ہونے والے متعدد کالموں اور مضامین میں بھارت کی اس بات کی تعریف کی گئی ہے کہ جب 2014ءمیں فلسطین پر اسرائیلی حملے کی پوری دنیا مذمت کررہی تھی تو بھارت نے اس کے بارے میں ایک لفظ تک نہ کہا۔ ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق یروشلم پوسٹ میں شائع ہونے والے ایک اداریے میں خصوصی طور پر اس کا ذکر کیا گیا کہ جب 2014ءمیں فلسطین پر آپریشن پروٹیکٹو ایج کے نام پر کئے گئے اسرائیلی حملے کے خلاف اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ میں اسرائیل کی مذمت کی گئی تو بھارت نے اس کے حق میں بھی ووٹ نہ دیا ۔

بھارتی حکومت نے مسلمانوں کے خلاف اب تک کا سب سے بڑا قدم اٹھا لیا، مسجد کی تصویر ۔۔۔

فلسطین پر اسرائیل کا حملہ شروع ہونے سے دو ماہ قبل ہی وزیراعظم نریندر مودی نے عہدہ سنبھالا تھا اور انہوں نے اپنی وزارت عظمیٰ کے آغاز میں ہی اسرائیل کی غیر مشروط حمایت کا ثبوت پیش کردیا تھا۔ اسی طرح روزنامہ ہارٹز میں شائع ہونے والے ایک کالم میں اس بات کی جانب توجہ دلائی گئی کہ بھارت اگر کبھی فلسطینیوں کے بارے میں بات کرتا بھی ہے تو یہ محض ایک کاغذی کارروائی ہوتی ہے کیونکہ دراصل وہ اس معاملے میں اسرائیل کا مکمل اور بھرپور حمایتی ہے۔ اس مضمون میں مزید لکھا گیا کہ اگرچہ بظاہر بھارت فلسطینیوں کیلئے دوستانہ رویہ رکھتا ہے لیکن اصل میں اسرائیل کا سچا دوست ہے۔اسرائیلی میڈیا کی طرح بھارتی میڈیا بھی دونوں ممالک کی گہری محبت کے گن گاتا نظر آ رہا ہے۔

افسوس کہ ان دونوں غاصب ممالک کا تعلق مزید گہرا اور مضبوط ہو رہا ہے جس کے نتیجے میں ایک جانب اہل فلسطین پر مظالم بڑھیں گے تو دوسری جانب کشمیریوں کی اور لاشیں گریں گی۔

مزید :

بین الاقوامی -