اوکاڑہ، سفاک ملزمان نے 2کمسن بھائیوں کو مار کرلا شیں نہر میں بہادیں 

اوکاڑہ، سفاک ملزمان نے 2کمسن بھائیوں کو مار کرلا شیں نہر میں بہادیں 

  

 اوکاڑہ(نامہ نگار،بیورورپورٹ)رحمان کالونی کے علاقہ میں المناک واقعہ، دو ملزمان نے دو بچوں کو اغواء کے بعدگلا دبا کر قتل کر کے لاشیں نہر میں پھینک دیں، بچوں کے والد نے ملزموں کو اس کے بچوں کے ساتھ کھیلنے سے منع کیا تھا اور ڈانٹ ڈپٹ کی تھی، پولیس نے سی سی ٹی وی کی مدد سے مرکزی ملزم کو ساتھی سمیت گرفتار کر لیا، ملزمان کا پولیس کے سامنے اعتراف جرم، دونوں بچوں کی نعشوں کی تلاش کے لئے ریسکیو آپریشن جاری،وزیراعلیٰ پنجاب سردارعثمان بزدار نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے آر پی او سے رپورٹ طلب کر لی،دونوں ملزمان کے خلاف سخت کارروائی اور لواحقین کو انصاف فراہم کرنے کی ہدایت۔ تفصیلات کے مطابق تھانہ بی ڈویژن کے علاقہ رحمان کالونی کے رہائشی حسنین کے دو بیٹے گیارہ سالہ طلحہ اور پانچ سالہ محمد علی احمد مدرسہ سے قرآن پاک کی تعلیم حاصل کرنے کے بعد گھر واپس آ رہے تھے جن کو راستے میں موٹر سائیکل سوار دو نوجوانوں نعمان اور تنویر نے  اغواء کر لیا۔واقعہ کی اطلا ع پرایس پی عبداللہ لک نے فوری طور پر ڈی ایس پی مہر یوسف اور ایس ایچ او حافظ سعید کو بچوں کی بازیابی اور ملزمان کی گرفتاری کا ٹاسک دیاجنہوں نے ایس ایچ او حافظ سعید اور پولیس پارٹی کے ہمراہ چھاپہ مارتے ہوئے ملزمان نعمان اور تنویر کو حراست میں لیتے ہوئے تحقیقات کیں تو ملزمان  نے پولیس کے سامنے اعتراف جرم کرتے ہوئے بتایا کہ بچوں کے والد حسنین نے کچھ روز قبل ان کے بچوں کے ساتھ کھیلنے سے منع کیا تھا اور گالی گلوچ کی تھی جس کی رنجش پر دونوں بھائیوں طلحہ اور محمد علی کو اغوا کے بعد نہر کنارے لے جا کرقتل کیا۔ اس حوالے سے ایس پی عبداللہ لک کا کہنا تھا کہ وقوعہ کی ہر پہلو سے تحقیقات کی جا رہی ہے اس وقوعہ میں اگر کوئی  مزید بھی ملوث ہوا تو اس کو بھی گرفتار کر لیا جائے گا۔ بچوں کے اچانک اغوا اور نہر میں پھینکنے کے واقعہ پر علاقہ بھرکی فضا سوگوار ہو گئی بچوں کی ماں ڈھاریں مار مار کر روتی رہی جبکہ سوگ میں قریبی بازار مکمل بند ہو گئے۔

بچے قتل

مزید :

صفحہ آخر -