مہنگائی،بے روزگاری،مافیا زکی خوشحالی حکومت کے تحائف، لیاقت بلوچ

مہنگائی،بے روزگاری،مافیا زکی خوشحالی حکومت کے تحائف، لیاقت بلوچ

  

ڈیرہ غازیخان(بیورورپورٹ) جماعت اسلامی پاکستان کے نائب امیر لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ عمران خان کی حکومت صرف تقریروں ہی سے کام چلارہی ہے وہ اخلاقی،اقتصادی اور پارلیمانی محاز پر مکمل طور پر ناکام ہو چکی ہے عام انتخابات سے پہلے انتخابی اصلاحات قومی اتفاق رائے سے کیا جائے لیکن اس سلسلہ میں حکومت کا رویہ غیر جمہوری اور غیر پارلیمانی ہے جبکہ جماعت اسلامی نے انتخابی اصلاحات کا مسودہ قومی ڈائیلاگ کے لئے جاری کردیا ہے وہ یہاں ایک (بقیہ نمبر24صفحہ6پر)

پر ہجوم پرلیس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے اس موقع پر جنوبی پنجاب کے امیر راؤ محمد ظفر،سیاسی کمیٹی کے جنرل سیکرٹری پروفیسر افتخار احمد ہاشمی،ضلعی امیر رشید احمد اختر،شیخ عثمان فاروق،جاوید اقبال بلوچ،منیر احمد کلاچی،رانا عمر دراز،ڈاکٹر عرفان اللہ ملک،چوہدری اصغر علی گجر،شیخ عبدالستاراور رشید احمد پٹھان سمیت دیگر موجود تھے  لیاقت بلوچ نے کہا  کہ ملک کے اقتصادی، داخلی وخارجی اور انتخابی اصلاحات سمیت دیگرتمام درپیش مسائل کے حل کے لئے نیشنل ڈائیلاگ سے مشترکہ اور متفقہ حکمت عملی کے تحت حل کیے جاسکتے ہیں جبکہ ڈومیسٹک وائلینس بل مضبوط خاندانی نظام کو توڑنے کی مربوط سازش اور معاشرے کو سیکولرائز کرنے کی بھونڈی کوشش ہے جماعت اسلامی ایسے بل کو یکسر مُسترد کرتی ہے اور وہ ایسا ہرگز نہیں ہونے دیں گے انہوں نے کہا کہ کشمیرپرحکمرانوں کی سودے بازی کی کوشش کشمیریوں کے خون سے غداری کے مترادف ہے،انہوں نے عمران خان کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ وہ  ایسا کرنے سے باز رہیں  نائب امیر جماعت اسلامی نے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ عمران خان کا تین سالہ دور مہنگائی، بد انتظامی، کرپشن، نااہلی، بیروزگاری اور لوٹ کھسوٹ کا دور ہے، عوام کی بد حالی اور مافیاز کی خوشحالی موجودہ حکومت کے تحائف ہیں جبکہ اس حکومت کا ایک جرم یہ بھی ہے کہ ریاست مدینہ کا نطام دینے کا وعدہ کیا لیکن نصاب تعلیم کو سیکولرکرنے کے لئے اسلامی تعلیمات کونکالاجارہا ہے فیٹف اور آئی ایم ایف کے دباؤ پر وقف املاک کا بل لایا گیا  لیاقت بلوچ کا کہنا تھا کہ جماعت اسلامی آئندہ عام انتخابات میں ترازو کے نشان پر بھرپور حصہ لے گی اور عوام اسلامی نظام زندگی کے نفاذ کیلئے جماعت اسلامی کا ساتھ دیں انہوں نے کہا جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے سیاست دان ملک کے تمام بڑے عہدوں پر فائز رہے لیکن اس خطے کے عوام آج بھی بنیادی سہولیات سے محروم ھے یہی وجہ ہے کہ تمام سیاسی پارٹیاں اور سیاست دان اقتدار کی راہداریوں تک پہنچنے کے لیے یہاں کے عوام کو الگ صوبے کے قیام کا لولی پاپ دے کر وعدہ وفا کرنا بھول جاتے ہیں پی ٹی آئی کی حکومت کا بھی جنوبی پنجاب کو الگ صوبہ بنانے کا وعدہ تین سال سے التواء کا شکار چلا ارہا ھے، انہوں نے وزیراعظم عمران خان سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ جنوبی پنجاب کے عوام سے کیا گیا اپنا وعدہ پورا کریں اورجنوبی پنجاب کو الگ صوبہ بنایا جائے۔

لیاقت بلوچ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -