بلوچستان امن وامان کیس، اجلاس کی رپورٹ طلب، وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری اور وزیردفاع نے سپریم کورٹ میں بیان جمع کرادیا

بلوچستان امن وامان کیس، اجلاس کی رپورٹ طلب، وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری اور ...
بلوچستان امن وامان کیس، اجلاس کی رپورٹ طلب، وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری اور وزیردفاع نے سپریم کورٹ میں بیان جمع کرادیا

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) بلوچستان کے مسئلے پروزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری اور وزارت دفاع کی جانب سے سپریم کورٹ میں جواب جمع کرادیاگیاہے جبکہ عدالت نے بلوچستان کے مسئلے پر کوئٹہ میں ہونے والے اعلیٰ سطح کے اجلاس کی رپورٹ طلب کرلی ہے ۔چیف جسٹس کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بنچ کے روبرو بلوچستان کے مسئلے پر وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری خوشنود لاشاری اور وزارت دفاع کی جانب سے عدالت میں بیان جمع کرایاگیا۔سیکرٹری داخلہ نے کہاکہ تمام ایجنسیوں سے لاپتہ افراد کی فہرست طلب کی ہے ۔عدالت نے لاپتہ افراد کی گمشدگی پر ایف آئی آر کا اندراج نہ ہونے پر برہمی کا اظہارکیا۔اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایاکہ وزیراعظم کی زیرصدارت بلوچستان کے مسئلے پر اعلیٰ سطحی اجلاس طلب کرلیاگیاہے جس پر چیف جسٹس نے اُس اجلاس کی رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کی ہدایت کردی۔جسٹس جواد ایس خواجہ نے اپنے ریمارکس میں کہاکہ ہر کام اُس وقت ہوتاہے ،جب عدالت حکم دیتی ہے ۔اٹارنی جنرل نے کہاکہ حکومت اپنے طورپر بہت کچھ کرتی ہے ،جنرل ریٹائرڈ طارق مجید کے داماد کو بہت کوششوں کے بعدبازیاب کرایاہے جبکہ بلوچستان کے حالات کی سنگینی کا بھی احساس ہے ۔جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہاکہ وزیراعظم کے کوئٹہ پہنچنے سے قبل ہی چھ افراد کو قتل کردیاگیاتھا،ہم بہت معصوم ہیں یا عدالت کے ساتھ مذاق کیاجارہاہے۔ بعدازاںمزید سماعت پانچ روز کے لیے ملتوی کردی گئی۔

مزید : اسلام آباد /اہم خبریں