لاہور،بجلی فراہم کرنےوالے فیڈروں اور گرڈ سٹیشنوں کے انچارج افسران بھی طلب

لاہور،بجلی فراہم کرنےوالے فیڈروں اور گرڈ سٹیشنوں کے انچارج افسران بھی طلب

لاہور(کامرس رپورٹر)( ایف ائی اے لاہور نے لیسکو میں ہونے والی بد عنوانیوں کے خلاف جاری تحقیقات کا دائرہ کار وسیع کرتے ہوئے کئی ٹیکسٹائل ملوں کو بھی شامل تحقیقات کر لیا ہے ۔ جبکہ ان ملوں کو غیر قانونی طور پر بجلی فراہم کرنے والے فیڈروں اور گرڈ سٹیشنوں کے انچارج افسران کو طلب کر لیا ہے، ایف آئی اے کی تفتیشی ٹیم نے 4 فیڈر اولمپیا ، گریس، نفیسہ اور پٹی کی انتظامیہ کو بھی عملہ سمیت طلب کر لیا ہے ، ایف آئی اے نے مذکورہ فیڈروں سے متعلقہ کمپیوٹرائزڈ اور مینوئل ریکارڈ بھی ہمراہ لانے کا کہا ہے،ایف آئی اے کی چارج شیٹ میں سابق چیف ارشد رفیق اور آپریشن ڈائریکٹر محبوب علی پر گھریلو صارفین کی بجلی انڈسٹری کو دینے کے الزامات ہیں، اس حوالے سے ذرائع کا کہنا ہے کہ چارج شیٹ میں لگائے جانیوالے الزامات ثابت نہیں ہو سکتے، شٹ ڈاﺅن کے بعد سسٹم میں بچ جانیوالی بجلی کسی دوسری جگہ دینا لیسکو چیف کا صوابدیدی اختیار ہے، گزشتہ روز عدالت میں پیشی کے موقع پر لیسکو چیف ارشد رفیق اورآپریشن ڈائریکٹر محبوب علی کی طرف سے کوئی وکیل عدالت میں پیش نہیں ہوا جس پر عدالت نے ملزمان کومخاطب کرتے ہوئے ملزمان پرلگائے گئے الزامات کے بارے میں دریافت کیاتو ملزمان نے موقف اختیارکیاکہ وہ کسی بھی کرپشن میں ملوث نہیں ہیں ہمیں تویہ بھی معلوم نہیں کہ ہمارے خلاف مقدمہ کیا درج کیاگیا ہے اورنہ ہی ہمیں مقدمہ کی نقول فراہم کی گئی ہیں ہمیں توایف آئی اے نے اپنی قید میں رکھنے کے بعد آج عدالت میں پیش کردیاگیا ہے جس پرعدالت نے ملزمان کوفوری ایف آئی آرکی کاپیاں فراہم کرنے کی ہدایت کی ، ایف ائی اے ملزمان کواپنے حصار میں لیکرگاڑیوں میں بٹھا کرلے گئی جبکہ اس موقع پرمیڈیاکوبھی ملزمان سے بات کرنے کاموقع فراہم نہیں کیاگیا۔

مزید : صفحہ اول