فلسطینی حکومت کیلئے امریکی بیان پر اسرائیل سیخ پا ہو گیا

فلسطینی حکومت کیلئے امریکی بیان پر اسرائیل سیخ پا ہو گیا
فلسطینی حکومت کیلئے امریکی بیان پر اسرائیل سیخ پا ہو گیا

  


تل ابیب (مانیٹرنگ ڈیسک) اسرایل نہ صرف خود فلسطینیوں پر ہمہ وقت قیامت نازک کئے رکھتا ہے بلکہ اس بات کیلئے بھی مسلسل کوشاں رہتا ہے کہ دنیا کے دیگر ممالک بھی فلسطین کیلئے کسی خیر کا باعث نہ بن سکیں۔ حال ہی میں امریکہ نے بھولے سے اعلان کر دیا کہ وہ فلسطین میں قائم ہونے والی نئی حکومت کے ساتھ کام کرنے کیلئے تیار ہے۔ اگر چہ امریکہ کا یہ بیان محض الفاظ تک محدود تھا لیکن اسرائیل اس پر بھی سیخ پا ہو گیا اور اس کے وزیر خارجہ نے اپنے محسن ملک سے سخت ناراضگی اور مایوسی کا اظہار کیا۔ یہاں تک کہ اسرائیلی وزیر خارجہ ڈرمر نے غیر مہذب زبان استعمال کرنے میں بھی ہچکچاہٹ کا مظاہرہ نہیں کیا۔ ٹوئٹر پر اپنے متعدد بیانات میں ڈرمر نے کہا کہ حماس اسرائیلیوں کی قاتل ہے اور اسرائیل پر راکٹ برساتی ہے اور اب یہ تنظیم فلسطینی ’الفتح‘ پارٹی کے ساتھ مل کر حکومت بنا چکی ہے جسے اسرائیل قبول نہیں کرے گا۔ اسرائیلی وزیر خارجہ نے کہا کہ نئی فلسطینی حکومت نے صرف سامنے سوٹ والے لوگوں کو رکھا ہے جبکہ پیچھے دہشت گرد ہیں اور یہ کہ اس حکومت کو قاتل اور دہشت گرد ہی سمجھنا چاہئے۔ اسرائیلی وزیر خارجہ نے امریکہ کے فلسطینی حکومت کے ساتھ کام کرنے کے بیان پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے امریکہ کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ اسرائیلی وزیر خارجہ کے بیانات نے ایک دفعہ پھر واضح کر دیا ہے کہ اسرائیل امن دشمن ہے اور کسی کا بھی دوست نہیں ہے۔

مزید : بین الاقوامی