شیخوپورہ میں پٹرول کی قلت، شہری لٹنے پر مجبور، انتظامیہ نے چپ سادھ لی

شیخوپورہ میں پٹرول کی قلت، شہری لٹنے پر مجبور، انتظامیہ نے چپ سادھ لی

  

شیخوپورہ(بیور ورپورٹ)شہر اور مضافات میں پیٹرول پمپ مالکان نے دونوں ہاتھوں سے خریداروں کو چونا لگانا شروع کردیا کئی پیٹرول پمپ مالکان نے پیٹرول ختم ہونے اور کئی نے پیٹرول ایک سو روپے سے زائد دینے پر خریداروں سے معذرت کرنا شروع کردی،نئے پاکستان میں عام آدمیوں کو پیٹرولیم مصنوعات سے انکار کرنے پر خریداروں اور پیٹرول پمپ مالکان کے ساتھ توں تکرار کرنے کے واقعات بھی رونما ہونا شروع ہوگئے،خریداروں نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کے بعد پیٹرول پمپ مالکان میرز میں ہیراپھیری کرکے اپنی رقوم کو پوری کرنے میں لگے ہوئے ہیں جبکہ ضلعی انتظامیہ خواب خرگوشاں کے مزئے لوٹنے میں لگی ہوئی ہے،خریداروں امتیاز باجوہ،اکرام الحق بھٹی،فرحان علی اور دیگر کاکہناہے کہ لاہور روڈ،سرگودھاروڈ،گوجرانوالہ روڈ،مریدکے،خانقاہ ڈوگراں،صفدر آباد،اور نارنگ منڈی میں بھی پیٹرول گاہکوں کی ڈیمانڈ سے کم دیا جارہا ہے، اور ان پیٹرول پمپ مالکان اور ان کے کارندوں نے پیٹرول ڈالنے والی مشینوں کو 100روپے پر فیکس کر رکھی ہیں جبکہ پیٹرول سو روپے سے بھی کم ڈالا جاتا ہے،پیٹرول پمپس مالکان پر خریداروں کی لمبی قطاریں لگی ہوئی ہیں اور پیٹرول پمپ مالکان من مانیاں کرنے میں لگے ہوئے ہیں جن کو چیک کرنے والے تمام ادارے خواب خرگوشاں کے مزئے لوٹ رہے ہیں،خریداروں کے مطابق جب پیٹرولیم مصنوعات مہنگی ہوا کرتی تھیں اس وقت پیٹرول کی شارٹیج کی کبھی شکایت نہیں جیسے ہی قیمتوں میں عوام کو ریلیف فراہمی کا اعلان ہوا ہے پیٹرول پمپ مالکا ن کی نتیوں میں فطور آگیا ہے،عوامی سماجی حلقوں سے وزیر اعلیٰ پنجاب اور وزیر پیٹرولیم سے مطالبہ کیا ہے کہ پیٹرول پمپ مالکان کے میرز چیک کئےء جائیں اور پیٹرول کم فروخت کرنے کی بابت ان کے خلاف کارروائیاں بھی کی جائیں۔

پٹرول قلت

مزید :

علاقائی -