’میرا تو بوائے فرینڈ بھی سیاہ فام ہے‘ گھر سے بھاگ کر کینیڈا میں پناہ لینے والی سعودی لڑکی امریکی مظاہرین کے حق میں آگے آگئی

’میرا تو بوائے فرینڈ بھی سیاہ فام ہے‘ گھر سے بھاگ کر کینیڈا میں پناہ لینے ...
’میرا تو بوائے فرینڈ بھی سیاہ فام ہے‘ گھر سے بھاگ کر کینیڈا میں پناہ لینے والی سعودی لڑکی امریکی مظاہرین کے حق میں آگے آگئی

  

اوٹاوا(مانیٹرنگ ڈیسک) گزشتہ سال گھر سے بھاگ کر کینیڈا جانے اور وہاں پناہ لینے والی سعودی لڑکی بھی امریکہ میں ہونے والے مظاہروں کے حق میں بول پڑی ہے۔ میل آن لائن کے مطابق رحف محمد نامی اس لڑکی نے امریکہ میں سیاہ فام شہری جارج فلوئیڈ کی پولیس کے ہاتھوں ہلاکت پر ہونے والے مظاہروں کو انسانی حقوق کا معاملہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ”میرا بوائے فرینڈ بھی سیاہ فام ہے لیکن میں اپنے بوائے فرینڈ کے ساتھ اپنی محبت کی وجہ سے جارج فلوئیڈ کے قتل کے خلاف نہیں بول رہی ۔ سیاہ فام شہریوں کی زندگیاں بھی اہمیت رکھتی ہیں اور ہمیں ان کے تحفظ کے لیے آواز اٹھانی چاہیے۔“

رحف محمد نے شنیپ چیٹ پراپنی پوسٹ میں مزید لکھا کہ ”جارج فلوئیڈ کے قتل کا معاملہ سیاسی نہیں بلکہ بنیادی انسانی حقوق کا معاملہ ہے۔ “ واضح رہے کہ 20سالہ رحف محمد گزشتہ سال سعودی عرب سے بھاگ کر تھائی لینڈ پہنچ گئی اور وہاں خود کو ایک ہوٹل کے کمرے میں بند کر لیا کیونکہ اسے خوف تھا کہ اسے سعودی حکام کے حوالے کر دیا جائے گا اور وہ اسے واپس سعودی عرب پہنچا دیں گے۔ اس نے ہوٹل کے کمرے سے ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر پوسٹ کی جو بہت وائرل ہوئی۔ بعد ازاں اسے امریکی پناہ گزین ایجنسی کے حوالے کیا گیا جس نے اسے کینیڈا پہنچا دیا اور وہاں اسے پناہ مل گئی۔

مزید :

بین الاقوامی -