بدعنوانی سے نمٹنے کے لئے بین الاقوامی تعاون کو مستحکم کرنا ضروری، منیر اکرم 

بدعنوانی سے نمٹنے کے لئے بین الاقوامی تعاون کو مستحکم کرنا ضروری، منیر اکرم 

  

 نیویارک(ارشد چوہدری) اقوام متحدہ کی اقتصادی اور سماجی کونسل (ای سی او ایس او سی) کے صدر، پاکستانی سفیر منیر اکرم نے بدعنوانی کیخلاف اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے خصوصی اجلاس میں ابتدائی بیان دیاانہوں نے کہا کہ بدعنوانی سے نمٹنے کیلئے بین الاقوامی تعاون کو مستحکم کرنا ضروری ہے،بد عنوانی کی وجہ سے ترقی پذیر ممالک سے غیر قانونی مالی اعانت کا بڑے پیمانے پر اخراج ہوتا ہے اور ان کی معاشی کارکردگی متاثر ہو تی ہے۔ ہمیں فوری اور مضبوط قومی اور بین الاقوامی اقدام کی ضرورت ہے۔ بدعنوانی غریبوں کی ترقی کے مواقع کو کم کرتی ہے،۔ایک اندازے کے مطابق 6 2.6 ٹریلین یا عالمی مجموعی گھریلو مصنوعات (جی ڈی پی) کا 5 فیصد ہر سال اس طرح کے رویے سے ضائع ہوتا ہے۔ ترقی پذیر ممالک $ 1.26 ٹریلین ڈالر ضائع کرتے ہیں۔اس وبائی مرض نے لاکھوں افراد کو انتہائی غربت کی طرف دھکیل دیا ہے، اس کے نتیجے میں 250 ملین ملازمتوں کا ضیاع ہوا ہے اور ان حالات میں بدعنوانی اور ناجائز مالی سست روی کا سلسلہ جاری رکھنا مجرمانہ ہے۔ مضبوط قومی اور بین الاقوامی اقدامات کی ضرورت ہے۔ عالمی سطح پر فائدہ مند ملکیت رجسٹری کے قیام سے مجرموں کی شناخت میں مدد ملے گی۔دریں اثنا ء بین الاقوامی کھوج کرنیوالی کمپنیوں کے معیارات کو وضع کرنا ہوگا، بشمول بین الملکی معاہدے جن میں کارپوریٹ معاہدوں کو کالعدم قرار دینے کی اجازت دی جاتی ہے تو اسے بدعنوانی کا پتہ چلنا چاہئے۔ سرمایہ کاروں کے ریاست کے تمام تنازعات پر عائد پابندی عائد کی جانی چاہئے،بدعنوانی پر قابو پانے سے دنیا بھر میں ٹیکس محصولات میں سالانہ tr 1 کھرب ڈالر کی فراہمی ہوسکتی ہے۔ یا عالمی جی ڈی پی کا 1.2 فیصد، یہ رقم حکومتوں کے ذریعہ صحت، تعلیم اور بنیادی ڈھانچے کی مدد کے لئے استعمال کی جاسکتی ہے۔بدعنوانی اور غیر قانونی مالی بہاؤ نظامی مسائل ہیں۔ ان سے لڑنے کے لئے عالمی کوششوں کی ضرورت ہے۔

منیر اکرم 

مزید :

صفحہ آخر -