یورینیم کی کھلے عام خریدوفروخت پر بھارت کیخلاف فوری تحقیقات کی جائیں 

یورینیم کی کھلے عام خریدوفروخت پر بھارت کیخلاف فوری تحقیقات کی جائیں 

  

  

 اسلام آباد (این این آئی)سابق وزیرداخلہ سینیٹر رحمان ملک نے فیٹیف کے صدر کو خط لکھ کر مطالبہ کیا ہے کہ یورینیم کی کھلے عام خرید و فروخت پر فیٹیف بھارت کیخلاف فوری تحقیقات شروع کرے۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رحمن ملک نے بتایاکہ یورینیم و دیگر ایٹمی مواد کی خرید و فروخت بین الاقوامی اور فیٹیف قوانین کی خلاف ورزی ہے، یورینیم کو دہشتگرد بم بنانے کیلئے استعمال کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ بھارت میں عام شہریوں سے 7 کلوگرام سے زیادہ یورینیم کی بازیابی انتہائی تشویشناک ہے، یورینیم کا اسطرح کا کاروبار عالمی امن کیلئے انتہائی تباہ کن ثابت ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ یہ پہلا موقع نہیں بلکہ ہر سال اسطرح کے کئی واقعات بھارت میں رونما ہوئے ہیں، ریاستی معاونت کے بغیر ایٹمی مواد کا اتنے بڑے پیمانے پر خرید و فروخت ممکن نہیں۔ انہوں نے کہاکہ ایف اے ٹی ایف قوانین کے مطابق ایٹمی ہتھیار تیار کرنے کے مواد کا کاروبار و پھیلاؤ ایک گھناؤنی جرم ہے، نیوکلیئر پھیلاؤ کی اس سراسر خلاف ورزی پر بھارت کے خلاف براہ سخت کارروائی عمل میں لائی جائے۔ انہوں نے کہاکہ بھارت کا کشمیر میں ظالمانہ کرفیو کے پانچ سو سے زائد دن ہوئے، دنیا بشمول اقوام متحدہ بھارتی مظالم پر چپ ہے۔ انہوں نے کہاکہ بھارت کے مقابلے میں فیٹیف پاکستان کیساتھ امتیازی سلوک روا رکھا گیا، فیٹیف بھارت کے گھناؤنے جرائم پر چپ ہے۔ انہوں نے کہاکہ امید ہے فیٹیف آنیوالے اجلاس میں پاکستان کا نام گرے لسٹ سے نکالے گا۔ انہوں نے کہاکہ اگر فیٹف پاکستان کو گرے لسٹ سے نہیں نکالتا تو میں اسکے خلاف عالمی عدالت انصاف میں لے جاؤں گا۔

رحمان ملک

مزید :

صفحہ آخر -