طلبہ سے صرف اختیاری مضامین کے امتحانات لینا انکے مستقبل کیساتھ کھلواڑ ہے   

طلبہ سے صرف اختیاری مضامین کے امتحانات لینا انکے مستقبل کیساتھ کھلواڑ ہے   

  

لاہور (دیبا مرزا سے) مختلف تعلیمی ما ہرین و سکو لز ایسو سی ایشنز کے سربرا ہا ن پاک ایوان تعلیم کے صدرقاضی نعیم انجم،ماہر تعلیم و سرونگ سکو لز ایسو سی ایشن کے صدر میا ں رضا رحما ن،سلما ن مقصود کا کہنا ہے کہ طلبہ سے صرف اختیا ری مضا مین کے امتحا نا ت لینا ان کے مستقبل کیساتھ کھلواڑ ہے۔ اختیا ری مضا مین کیساتھ ساتھ لا زمی مضا مین کا امتحا ن بھی ضروری ہے۔ مستقبل میں ہما رے طلبہ انٹرنیشنل مارکیٹ کیسا تھ ساتھ مقا می یو نیوسٹیو ں کا مقا بلہ کر نے کے اہل نہیں ہو ں گے، حکو مت کے غیر دا نشمندا نہ فیصلے طلبہ کی ذہنی صلا حیتو ں کو زنگ لگا نے اور بچو ں کو اندھیرں کی جانب دھکیلنے کے مترا دف ہے۔ہما ری حکو مت کو تجویز ہے کہ اختیا ری مضا مین کے امتحا نا ت لینے کے بجا ئے تما م مضا مین کے امتحا نا ت لینے کے سا تھ بچو ں ”کو گریس ما رکس“  کی رعا یت دی جا ئے۔وہ گزشتہ روز روزنا مہ ”پا کستا ن“ سے مو با ئل فورم میں گفتگو کر رہے تھے۔ انہو ں نے کہا کہ اس وقت ہما رے ملک کا تعلیمی نظا م بے شما ر مسا ئل کا شکا ر ہے۔انہو ں نے کہا کہ ہمیں دنیا کے سا تھ چلنے کے اپنے نظا م تعلیم کو بہتر بنا نا بہت ضروری ہے۔ حکو مت کی جانب سے مضا مین کے امتحا ن میں رعا یت دینے کے حوالے سے با ت کر تے ہو ئے ان کا کہنا تھا کہ حکو مت کو اس وقت دا نشمندا نہ فیصلو ں کی ضرورت ہے۔ انہو ں نے کہا کہ چا لیس فی صد بچو ں میں سے صرف دس فی صد بچے ایسے ہیں جو کہ گھر میں تعلیم کی جانب را غب ہو تے ہیں جبکہ تیس فی صد بچے اپنے اسا تذہ کی زیر نگرا نی تعلیم حا صل کر تے ہیں۔ انہو ں نے کہا کہ پہلے بھی بچو ں نے نو یں جما عت کے امتحا ن نہیں دیئے ہیں اب پھر ان کو آسا نی دینے کا مطلب ہے کہ ان کی ذہنی صلا حیتو ں کو زنگ لگا یا جا رہا ہے۔ انہو ں نے کہا کہ اس طرح کے فیصلو ں سے ہمیں مستقبل میں بے شما ر مسا ئل کا سا منا کر نا پڑے گا۔

 سکو لزایسو سی ایشنز

مزید :

صفحہ آخر -