نواز شریف کی جائیدادیں منجمد کرنے کیخلاف احتساب عدالت میں اعتراضات دائر 

    نواز شریف کی جائیدادیں منجمد کرنے کیخلاف احتساب عدالت میں اعتراضات ...

  

لاہور(نامہ نگار)غیرقانونی الاٹمنٹ کیس میں شریک ملزم میاں نواز شریف کی جائیدادیں منجمد کرنے کیخلاف یوسف عباس سمیت 7 افراد نے احتساب عدالت میں اعتراضات دائر کر دیئے،احتساب عدالت کے جج اسد علی نے یوسف عباس سمیت دیگر 7افرادکے اعتراضات پر نیب سے جواب طلب کرتے ہوئے کیس کے مرکزی ملزم میر شکیل الرحمن کے خلاف غیر قانونی پلاٹ الاٹمنٹ کی سماعت 8 جون تک ملتوی کردی،درخواست گزاروں کی طرف سے زین قاضی ایڈووکیٹ نے موقف اختیارکیا کہ مایں نواز شریف کی منجمد کی گئی جائیدادوں میں یوسف عباس شریف کا بھی حصہ ہے، میاں نواز شریف کی جائیدادیں منجمد کرنے پر اقبال مسیح، اسلم عزیز، اقبال برکت، محمد اشرف،عمیر رانا اور رانا مشتاق کو بھی اعتراضات ہیں، عدالت نے نواز شریف کی جائیدادیں منجمد کرنے سے قبل اعتراضات نہیں سنے، عدالت سے استدعاہے کہ میاں نواز شریف کی جائیدادیں نیلام کرنے سے روکا جائے، اس کیس میں عدالت نے نواز شریف کی عدم پیشی پر انہیں اشتہاری اوران کی جائیدادیں بھی منجمد کرنے کا حکم دے رکھا ہے،عدالت نے آئندہ سماعت پر گواہ معظم رشید اور ڈی ایل ڈی ون رائے محمود حسین کو ریکارڈ سمیت طلب کر لیا  نیب کا موقف ہے کہ ملزم میر شکیل نے اس وقت کے وزیراعلی نواز شریف کی ملی بھگت سے 1، 1 کنال کے 54 پلاٹ ایگزمپشن پر حاصل کئے،ملزم کا ایگزمپشن پر ایک ہی علاقے میں پلاٹ حاصل کرنا ایگزمپشن پالیسی 1986 ء کی خلاف ورزی ہے، ملزم میر شکیل نے نواز شریف کی ملی بھگت سے 2 گلیاں بھی الاٹ شدہ پلاٹوں میں شامل کرلیں، ملزم میر شکیل نے اپنا جرم چھپانے کیلئے پلاٹ اپنی اہلیہ اور کمسن بچوں کے نام پر منتقل کروا لئے۔

اعتراضات عائد

مزید :

صفحہ آخر -