بجٹ میں تاجروں کو نظرانداز کرنا نیک شکون نہیں گا،آغا ایوب شاہ

  بجٹ میں تاجروں کو نظرانداز کرنا نیک شکون نہیں گا،آغا ایوب شاہ

  

سکھر (ڈسٹرکٹ رپورٹر)جمعیت علما اسلام کے مرکزی رہنما سید آغا محمد ایوب شاہ نے کہا ہے کہ وفاقی بجٹ میں تاجر طبقے کو نظر انداز کیا گیا تو یہ ملکی معیشت کیلئے نیک شگون نہ ہوگا۔ ملک کی معاشی صورتحال تمام تر دعوں، اعلانات وعدوں اور اعداد و شمار کے برعکس منفی حد تک جاچکی ہے۔ مہنگائی بے لگام اور حکومت مہنگائی روکنے میں ناکام ہوچکی ہے۔ بے روزگاری اور بدحالی نے غریب عوام کی زندگی اجیرن کررکھی ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ملنے آنے والے تاجر تنظیموں کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ ملک بھر کی تاجر برادری نے ہمیشہ حکومت کا ہر کٹھن وقت میں بھرپور ساتھ دیا کورونا کی پہلی دوسری اور تیسری لہر کے دوران ہر کا تعاون کیا مگر حکومت کی جانب سے تاجروں کو نظر انداز کرنا درست طریقہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ کورونا کرائسس کے دوران تاجروں کا بہت کاروباری نقصان ہوچکا ہے حکومت ان نقصانات کے ازالے کیلئے وفاقی بجٹ میں ریلیف فراہم کرکے تاجروں کی معاشی مشکلات کو سمجھے اور بجٹ کی تیاری میں تاجر نمائندوں سے مشاورت کی جائے حکومت کی معاشی ٹیم تاجر نمائندوں کے ساتھ بیٹھ کر بجٹ تجاویز لے اور تاجروں کی مشاورت اور تجاویز کی روشنی میں بجٹ تیار کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری قومی معیشت کو پروان چڑھانے کیلئے تاجروں کو مشاورت میں شامل کرنا ہوگا انہوں نے کہا کہ غیر ملکی قروں کا بوجھ کم کرنے کیلئے حکومت غیر ترقیاتی اخراجات میں کمی کرے کایت شعاری کی پالیسی اپنائی جائے غیر ضروری فضول اخراجات پر پابندی عائد کی جائے وزرا اور اعلی افسران کیلئے بڑی اور لگژری گاڑیوں کے استعمال پر پاندی عائد کرکے فیول کی مد میں بھی بچت کی جائے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -