جنس تبدیل کرا کر عورت سے مرد بننے والے شخص نے بچے پیدا کرنے کا تجربہ بیان کردیا

جنس تبدیل کرا کر عورت سے مرد بننے والے شخص نے بچے پیدا کرنے کا تجربہ بیان ...
جنس تبدیل کرا کر عورت سے مرد بننے والے شخص نے بچے پیدا کرنے کا تجربہ بیان کردیا
سورس:   Instagram/kaydenxofficial

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) اگر مردوں کو بچے پیدا کرنے پڑتے تو وہ کیا محسوس کرتے؟ ایسا تاحال کسی مرد کا تجربہ تو شاید نہ ہو مگر جنس تبدیل کرکے عورت سے مرد بننے والے ’آدمی‘ نے اپنے تجربے کی بنیاد پر اس سوال کا حیران کن جواب دے دیا ہے۔ 

میل آن لائن کے مطابق امریکی ریاست کیلیفورنیا کے 34سالہ کیڈین کولمین نامی یہ آدمی جنس تبدیل کراکے عورت سے مرد بنا، اسے مردانہ خال و خد کے لیے مردانہ جنسی ہارمون ٹیسٹاسٹرون کے انجکشن لگوانے پڑتے تھے۔ آدمی بن جانے کے بعد بھی اس نے ایک آدمی ہی کے ساتھ تعلق استوار کر رکھا تھا۔ 2013ءمیں کچھ وقت کے لیے اس نے ٹیسٹاسٹرون کے انجکشن لگوانے بند کیے تو وہ حاملہ ہو ’گیا‘ اور 2014ءمیں ایک بیٹی کو جنم دے دیا جو اب 7سال کی ہے۔ کیڈین کی اس بیٹی کا نام ازائیلا ہے۔

اتنے وقفے کے بعد گزشتہ سال اس نے ایک بار پھر ’باپ‘ یا یوں کہہ لیں کہ ’ماں‘ بننے کا فیصلہ کیا اور ایک بار پھر ٹیسٹاسٹرون کے انجکشن ترک کرکے حاملہ ہو گیا۔ اب کا دوسرا بچہ بھی 10ماہ کا ہوچکا ہے۔ دو بچے پیدا کرنے والے اس مرد نے بتایا ہے کہ ”مرد بن کر حاملہ ہونا کسی صدمے سے کم نہیں ہوتا۔دونوں بار حاملہ ہونا میرے لیے انتہائی انتشار انگیز تجربہ تھا، جس کے میری ذہنی صحت پر بھی کافی منفی اثرات مرتب ہوئے اور سماج میں بھی مجھے سخت شرمندگی محسوس ہوتی تھی۔ میں کسی کو بتا نہیں پاتا تھا کہ میں حاملہ ہوں، بلکہ میں لوگوں کو بتاتا تھا کہ کثرت شراب نوشی کی وجہ سے میرا پیٹ بڑھا ہوا ہے۔لوگوں میں گھومتے ہوئے مجھے ڈر لگتا تھا کہ اگر انہیں پتا چل گیا کہ میں مرد ہونے کے باوجود حاملہ ہوں اور میرا پیٹ بچے کی وجہ سے بڑھا ہوا ہے تو وہ مجھے تشدد کا نشانہ بناڈالیں گے۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -