کورونا وائرس سے مرنیوالے سینکڑوں افراد کی آخری رسومات کا انتظام کرنیوالاشخص خود علاج کی سہولت نہ ملنے پر چل بسا

کورونا وائرس سے مرنیوالے سینکڑوں افراد کی آخری رسومات کا انتظام کرنیوالاشخص ...
کورونا وائرس سے مرنیوالے سینکڑوں افراد کی آخری رسومات کا انتظام کرنیوالاشخص خود علاج کی سہولت نہ ملنے پر چل بسا

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارت میں کورونا وائرس سے مرنے والے 1300لوگوں کی آخری رسومات کا انتظام کرنے والا 67سالہ آدمی ہسپتال میں بستر اور علاج نہ ملنے پر کورونا وائرس کے باعث موت کے منہ میں چلا گیا۔ ٹائمز آف انڈیا کے مطابق ناگ پور کے رہائشی اس عمر رسیدہ شخص کا نام چندن نیم جی تھا جس نے 1300لوگوں کی آخری رسومات میں ان کے خاندان کی مدد کی۔ وباءکے دوران چندن کی خدمات کے صلے میں شہر کے میئر دیاشنکر تیواری نے ان کو خراج تحسین بھی پیش کیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق جب چندن خود کورونا وائرس کا شکار ہوا تو اسے کسی ہسپتال میں بیڈ تک میسر نہ آیا۔ اس کی فیملی نے اس کے لیے ایک پرائیویٹ ہسپتال میں انتہائی مہنگے داموں ایک بیڈ کا انتظام کیا مگر تب تک اس کی حالت اس نہج تک پہنچ چکی تھی کہ وہ جانبر نہ ہو سکا۔چندن کی موت 26جولائی کے روز ہوئی۔ چندن نے کورونا وائرس کی وباءپھیلنے کے بعد سے رضاکاروں کا ایک گروپ بنا رکھا تھاجو مختلف حوالوں سے لوگوں کی مدد کرتا آ رہا تھا۔ یہ لوگ اپنی زندگیاں داﺅ پر لگا کر لوگوں کی مدد کرتے رہے اور بالآخر چند خود بھی اسی موذی وائرس کا شکار ہو گیا۔

مزید :

بین الاقوامی -کورونا وائرس -