بلدیاتی انتخابات، پنجاب اورسندھ میں حلقہ بندیاں ایک ساتھ کی جائیں:سپریم کورٹ

بلدیاتی انتخابات، پنجاب اورسندھ میں حلقہ بندیاں ایک ساتھ کی جائیں:سپریم کورٹ
بلدیاتی انتخابات، پنجاب اورسندھ میں حلقہ بندیاں ایک ساتھ کی جائیں:سپریم کورٹ
کیپشن: Supreme-Court

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ نے بلدیاتی انتخابات سے متعلق حکومت کے پیش کردہ مجوزہ شیڈول کو مسترد کر دیا ہے اور پورے ملک میں ایک ہی وقت میں بلدیاتی انتخابات کرانے کا حکم دیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں بلدیاتی انتخابات سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی جس دوران اٹارنی جنرل آف پاکستان نے انتخابات سے متعلق مجوزہ شیڈول پیش کیا اور عدالت کو بتایا کہ خیبرپختونخوا میں بلدیاتی انتخابات 7 جون 2015ءجبکہ سندھ اورپنجاب میں آئندہ سال فروری سے ہوں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ خیبر پختونخواہ میں انتخابات کیلئے ریٹرننگ افسر کی تعیناتی 20 مارچ تک کر دی جائے گی جبکہ پنجاب اور سندھ میں بلدیاتی انتخابات کا پہلا مرحلہ آئندہ سال 16 جنوری ، دوسرا مرحلہ 20 فروری اور تیسرا مرحلہ 26 مارچ کو ہو گا۔

سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ عروج پر، قیمت۔۔۔

سیکرٹری الیکشن کمیشن نے نے عدالت کو بتایا کہ حلقہ بندیوں کا عمل 4ماہ اور انتخابی فہرستوں کی تیاری 45 دنوں مکمل ہو گی۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے پیش کی گئی تفصیلات کا جائزہ لیتے ہوئے جسٹس سرمد نے کہا کہ حلقہ بندیاں، ووٹر لسٹیں اور انتخابی فہرستیں ساڑھے چار ماہ میں تیار ہوسکتی ہیں تو پھر اس سارے عمل کیلئے 8 ماہ کیوں مانگے جا رہے ہیں؟ عدالت نے استفسار کیا کہ اب تک پیپر کی خریداری کیوں نہیں کی گئی، الیکشن کمیشن کو صرف کاغذ کی خریداری کیلئے تین ماہ کیوں چاہئیں؟ اس پر سیکرٹری الیکشن کمیشن کا کہنا تھا کہ ادارے کو افرادی قوت کا سامنا ہے جس پر عدالت نے کہا کہ اگر ایسی بات ہے تو الیکشن کمیشن میں بھرتیاں کی جائیں اور انتخابات شیڈول 16 نومبر کے بجائے اگست کے پہلے ہفتہ جاری کیا جائے۔ عدالت نے ریمارکس دیئے کہ جمہوریت میں بلدیاتی نظام ناگزیر ہے اور ہمارا الیکشن کمیشن کو تنگ کرنے کا کوئی ارادہ نہیں۔ سپریم کورٹ نے الیکشن کمیشن کو پنجاب اور سندھ میں حلقہ بندیاں ایک ساتھ شروع کرنے اور ایک ہی وقت میں بلدیاتی انتخابات کرانے کی ہدایت بھی کی۔

مزید :

قومی -Headlines -