کلبھوش یادیو کیخلاف مقدمہ درج ، بھارت کو سوالنامہ ارسال کر دیا ، حوالے نہیں کیا جائیگا : سرتاج عزیز

کلبھوش یادیو کیخلاف مقدمہ درج ، بھارت کو سوالنامہ ارسال کر دیا ، حوالے نہیں ...

  

 اسلام آباد( آن لائن ،آئی این پی) مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ گرفتار بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کے خلاف ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے اور اب اس کیخلاف باقاعدہ مقدمہ چلے گا، اور اسے بھارت کے حوالے نہیں کیا جائے گا جبکہ بھارتی حکومت کو اس حوالے سے ایک سوالنامہ بھی ارسال کردیا گیا۔چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی کے زیر صدارت ہونیوالے اجلاس میں پیپلز پارٹی کی سینیٹر سحر کامران نے گرفتار بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کا معاملہ اٹھاتے ہوئے کہا کہ مشیر خارجہ نے کہا تھا کہ 31 دسمبر تک بھارتی جاسوس کے خلاف ناکافی شواہد تھے، بتایا جائے اب اس کے کیس میں کیا پیشرفت ہوئی ہے جس پر مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے کہا کہ میں نے ناکافی شواہد کی بات نہیں کی تھی، کلبھوشن یادیو کے خلاف ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے اور اب بھارتی جاسوس کے خلاف مقدمہ چلے گا۔ سرتاج عزیز نے کہا کہ 31 دسمبر تک یو این او کو ڈوزیئر ارسال کیا تھا، ڈوزیئر ارسال کرنے کا مقصد دنیا کو بتانا تھا کہ بھارت پاکستان میں مداخلت کرتا ہے۔ وزارت خارجہ کی جانب سے سینیٹ میں جمع کرائے گئے تحریری جواب میں کہا گیا کہ حکومت نے پاکستان کے داخلی معاملات میں بھارتی مداخلت کے واقعات میں ملوث ہونے سے متعلق اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کو آگاہ کر دیا ہے، حکومت پاکستان نے کلبھوشن یادیو اور اس کی سرگرمیوں سے متعلق بھی اقوام متحدہ کو باضابطہ آگاہ کر دیا ہے جبکہ دیگر ممالک اور بین الاقوامی اداروں کو بھی اس سے متعلق آگاہ کرنے پر غور کر رہے ہیں۔ کلبھوشن یادیو کے خلاف معلومات تفصیلی زمینی حقائق اور مختلف اداروں کی مشاورت سے تیار کی گئیں ہیں، متعلقہ معاملہ انتہائی حساس ہے اس لیے اس تفصیل تیار کرنا ہو گی۔ سینیٹر اعتزاز احسن نے کہا کہ وزیر اعظم کلبھوشن یادو کا نام لیں تو 50 ہزار روپے بلائنڈ فاونڈیشن کو دوں گا جس پر مشیر خارجہ نے کہا کہ وزیراعظم اس پر ایوان میں ضرور جواب دیں گے۔ جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سینیٹر طلحہ محمود نے کہا کہ ریمنڈ ڈیوس کا معاملہ بھی کلبھوشن یادیو جیسا تھا۔

سینیٹ

اسلام آباد (آن لائن) وفاقی وزیر برائے پارلیمانی امور شیخ آفتاب احمد نے کہا ہے کہ ملک میں ادویات کے معیار کے لئے 4 ڈرگ ٹیسٹنگ لیبارٹریاں قائم کی ہیں جن میں تین اسلام آباد میں اور ایک کراچی میں موجود ہے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سینٹ کے اجلاس میں وقفہ سوالات کے دوران جواب دیتے ہوئے کیا۔انہوں نے بتایا کہ وزارت سمندر پار پاکستانی اور انسانی وسائل کی ترقی میں اب تک 4074 رجسٹرڈ ایمپلائمنٹ پرموٹرز ہیں ۔ جو پرائیویٹ طور پر لوگوں کو باہر بھجواتے ہیں ان کے کیسز ایف آئی اے کے پاس چل رہے ہیں، وفاقی وزیر برائے پارلیمانی امور نے کہا کہ پاکستان میں فٹ بال کی 38 فیڈریشن ہیں جن کے آپس میں جھگڑے چل رہے ہیں حکومت ان فیڈریشن کو 6 لاکھ سے 35 لاکھ روپے دینے کو تیار ہے، نیشنل ہیلتھ سروسز ، ریگولیٹیز اینڈ کوآرڈینیشن کے ماتحت ہے اور اس نے این ای ایم ایل 216 وضع کر رکھا ہے جس کی بنیاد پر عالمی ادارہ صحت کی ضروری ادویات فہرست 208پر رکھی گئی ہے اس حوالے سے 415 ادویات کی لسٹ بنا بنا دی گئی ہے پاکستان پوسٹ کی آمدنی میں باقاعدہ اضافہ ہو رہا ہے این 45 نوشہرہ سے شروع ہو کر چترال تک جانا ہے اور اس پر 1100 ملین روپے خرچ کئے گئے ہیں انہوں نے کہا کہ این 45 کو سی پیک کا حصہ بنانے کیلئے فزیبلٹی بنائی جا رہی ہے فنڈز کے مطابق اس پر عمل کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ لواری ٹنل کو 2017 میں ٹریفک کے لئے کھول دیا جائے گا۔

شیخ آفتاب

اسلام آباد(آن لائن) چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی نے وفاقی وزراء کی سینیٹ کے اجلاس میں عدم شرکت پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت سینیٹ کے ا جلاس کو چلانا نہیں چاہتی انہوں نے جمعہ کے روز سینیٹ کے اجلاس میں قائد ایوان راجہ ظفر الحق سے پوچھا کہ وفاقی وزراء کدھر ہیں اجلاس کے دوران جو بھی سوال کیا جاتا ہے اس کا جواب متعلقہ وزیر نہیں دیتا بلکہ سب وزارتوں کا جواب شیخ آفتاب ہی دے رہے ہیں ۔ ایک سوال کے جواب دینے کیلئے شیخ آفتاب اپنی سیٹ سے اٹھے تو چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ آپ بیٹھ جائیں اس سوال کا جواب متعلقہ وزیر ہی دیں اور بتائیں کہ متعلقہ وزیر کیوں نہیں آئے ؟ تو اس پر شیخ آفتاب نے کہا کہ مجھے جوابات کی فائلیں پہنچ جاتی ہیں اور وہ میں پڑھ دیتا ہوں۔

چیئرمین سینیٹ

مزید :

صفحہ اول -