دوہرے قتل کیس میں ملوث ملزم کی  سزائے موت ختم کرنے کا حکم

دوہرے قتل کیس میں ملوث ملزم کی  سزائے موت ختم کرنے کا حکم

  

 ملتان (خصو صی  ر پو رٹر) لاہور ہائیکورٹ ملتان کے ڈویژن بینچ نے دوہرے قتل کے مقدمہ میں موت کی سزا پانے والے ملزم کی سزا ختم کرنے کا حکم دیا ہے جبکہ دیگر بری (بقیہ نمبر49صفحہ 6پر)

شدہ پانچ ملزمان کو سزا سنانے کے خلاف اپیل کو مسترد کر دیا ہے۔ قبل ازیں عدالت عالیہ میں ملزم محمد حنیف نے موت کی سزا کے خلاف اپیل دائر کرتے ہوئے موقف اختیار کیا تھا کہ 10 جنوری 2012 کو تھانہ صدر بورے والا ضلع وہاڑی میں زیر دفعہ 302 کے تحت مقدمہ نمبر 12 درج ہوا جس پر سیشن کورٹ بوریوالا ضلع وہاڑی نے اسے سزائے موت اور دو لاکھ روپے معاوضہ کی سزا سنائی سنائی جب کہ ساتھی پانچ ملزمان  منظور احمد، محمد اعظم، عبدالمناف، اعجاز اور اللہ دتہ کو شک کی بنیاد پر بری کر دیا گیا تھا یہ فیصلہ 30 ستمبر 2015 کو سنایا گیا ان کے خلاف الزام تھا کہ انہوں نے بشیر احمد اور بشیراں بی بی نامی خاتون کو قتل کر دیا تھا۔ ملزم کے وکیل پرنس ریحان افتخار نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ملزم کے خلاف فیصلہ غلط ہے اور شکوک وشبہات کو مدِنظر رکھے بغیر ملزم کو سزا سنائی گئی اس لئے ملزم کو بری کرنے کا حکم دیا جائے۔ عدالت عالیہ نے وکیل کے دلائل سے اتفاق کرتے ہوئے ملزم کی سزائے موت کو ختم کردیا ہے جبکہ دیگر بری شدہ پانچ ملزمان کو سزا سنانے کے خلاف اپیل مسترد کردی ہے۔

حکم

مزید :

ملتان صفحہ آخر -