بچے کس کس طرح امتحانات میں نقل کرتے ہیں؟ ایسی تصاویر سامنے آگئیں کہ ہنسی روکنا مشکل 

بچے کس کس طرح امتحانات میں نقل کرتے ہیں؟ ایسی تصاویر سامنے آگئیں کہ ہنسی ...
بچے کس کس طرح امتحانات میں نقل کرتے ہیں؟ ایسی تصاویر سامنے آگئیں کہ ہنسی روکنا مشکل 

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) کچھ طالب علم ہوتے ہیں کہ پڑھائی میں محنت تو کر نہیں پاتے لیکن امتحان میں نقل کے حوالے سے ان کا دماغ ایسا چلتا ہے کہ بڑے بڑے عالی دماغ دنگ رہ جائیں۔

ویب سائٹ spotlightstories.co نے اپنی ایک رپورٹ میں نقال طالب علموں کے نقل کے کچھ ایسے ہی اختراعی طریقوں پر مبنی تصاویر پبلش کی ہیں۔ ان میں سے پہلی تصویر میں ایک لڑکی نے اپنے ناخنوں پر ریاضی کے سوالات نیل پالش کے ذریعے لکھ رکھے ہوتے ہیں۔ دوسری تصویر میں ایک طالب علم سے پکڑا گیا موبائل فون دکھایا گیا ہوتا ہے۔ یہ موبائل فون اس طالب علم نے ایک کیلکولیٹر کے اندر اس طریقے سے چھپا رکھا تھا کہ اس کی ذہانت پر آدمی دنگ رہ جائے۔

تیسری تصویر میں ایک طالب علم ایک ہاتھ سے لکھ رہا ہوتا ہے اور دوسرا ہاتھ اس نے شرٹ کے بازو سے نکال کر نیچے موبائل فون پکڑ رکھا ہوتا ہے جبکہ شرٹ کا خالی بازو میز پر رکھا ہوتا ہے تاکہ نگران ٹیچر سمجھے کہ اس کے دونوں ہاتھ میز پر ہی ہیں۔ ایک طالب علم سے پکڑی جانے والی پرچی کی تصویر بھی اس رپورٹ میں شامل ہے جس پر طالب علم نے نظر نہ آنے والی سیاہی سے لکھ رکھا ہوتا ہے، جو صرف نیلے رنگ کی روشنی پڑنے پر ہی نظر آتا تھا۔

یہ طالب علم نیلے رنگ کی روشنی والی ٹارچ ساتھ لے کر آیا تھا۔ اگلی تصویر ایک جوتے کے تلوے کی ہے جس پر طالب علم نے ریاضی کے سوال کندہ کر رکھے ہوتے ہیں۔ اگلی تصویر میں ایک آدمی دوا کی شیشی دکھائی گئی ہے جس کے لیبل پرطالب علم سوالات پرنٹ کرکے لایا ہوتا ہے۔رانوں اور جسم کے دوسرے حصوں پر پرچیاں چسپاں کرکے لانے اور جسم کے مختلف حصوں پر سوالات لکھ کر لانے کی تصاویر بھی اس رپورٹ کا حصہ ہیں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -