قائد کا شہر دہشت گردوں کے نرغے میں ، جگہ جگہ دھماکے ، تین افراد جاںبحق ، تیس سے زائد زخمی ، آج سندھ میں یومِ سوگ ، بڑے شہروں میں ہڑتال ہوگی

قائد کا شہر دہشت گردوں کے نرغے میں ، جگہ جگہ دھماکے ، تین افراد جاںبحق ، تیس ...
 قائد کا شہر دہشت گردوں کے نرغے میں ، جگہ جگہ دھماکے ، تین افراد جاںبحق ، تیس سے زائد زخمی ، آج سندھ میں یومِ سوگ ، بڑے شہروں میں ہڑتال ہوگی

  

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) قائد کا شہر کراچی دہشت گردوں کے نرغے میں آکر دھماکوں سے گونجتا رہا اور معصوم شہری تیزہوا میں سوکھے پتوں کی طرح گرتے رہے، اب تک مختلف دھماکوں میں تین افراد جاں بحق اور تیس سے زائد زخمی ہوئے ہیں جنہیں ہسپتال منتقل کردیا گیا جن میں سے بعض کی حلات نازک بیان کی جاتی ہے اور ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے ۔ ان دھماکوں کیخلاف آج سندھ میںسوگ اوعر بڑے شہروں میں ہرتال کا اعلان کیا گیا ہے جبکہ سیاسی قائدین نے ان دھماکوں کی مذمت کی ہے ۔ عزیز آباد نمبر 8 میں ایم کیو ایم کے انتخابی دفتر کے قریب یکے بعد دیگرے دو دھماکوں کے نتیجے میں 3تین افراد جاں بحق اور رینجرز اہلکاروں سمیت 33 زخمی ہوگئے۔ایکسپریس نیوز کے مطابق پہلا دھماکا لال قلعہ گراو¿نڈ کے عقب میں ایم کیو ایم کے انتخابی دفتر کے قریب ہوا جس کے نتیجے میں متعدد افراد زخمی ہوگئے جبکہ دوسرا یاسین آباد قبرستان کے قریب ہوا جس میں رینجرز اہلکار بھی زخمی ہوئے۔ دھماکے انتہائی زور دار تھے جن کی آواز دور دور تک سنائی دی اور علاقے میں شدید خوف وہراس پھیل گیا۔ زخمیوں کو عباسی شہید ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے جہاں انہیں طبی امداد فراہم کی جارہی ہے تاہم زخمیوں میں سے بعض کی حالت تشویشناک ہے جس کے باعث ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔دھماکوں کے بعد علاقے کی بجلی بھی منقطع ہوگئی جس کے باعث امدادی کارروائیوں میں مشکلات کا سامنا ہے ۔ پولیس اور رینجرز نے جائے وقوعہ کو گھیرے میں لے کر شواہد اکٹھے کرنا شروع کردیئے ہیں۔ دھماکوں کی ذمہ داری کالعدم تحریک طالبان پاکستان نے قبول کرلی ہے۔ڈی آئی جی ویسٹ کے مطابق بم ڈسپوزل سکواڈ نے تفیتیش کا آغاز کردیا ہے جس کے بعد دھماکے کی نوعیت سے متعلق کچھ کہا جاسکے گا تاہم ابھی کچھ بھی کہنا قبل از وقت ہوگا۔ ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین نے دھماکوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ دھماکے پرامن اور نہتےعوام کےخلاف کھلی جارحیت ہے۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گرد تسلسل کے ساتھ معصوم لوگوں کو اپنی مذموم کارروائیوں کا نشانہ بنارہے ہیں لیکن ان کے خلاف کوئی کارروائی نہیں ہورہی۔ نگراں وزیراعظم نے ایم کیو ایم کے انتخابی دفتر کے قریب بم دھماکوں کی مذمت کرتے ہوئے وزیر داخلہ کو فوری طور پر کراچی پہنچنے کا حکم دے دیا۔ نگراں وزیراعظم میر ہزار خان کھوسو نے کراچی میں دو دھماکوں پر اظہار مذمت کیا ہے، نگراں وزیراعظم نے نگراں وزیراعلیٰ سندھ زاہد قربان علوی سے رابطہ کرکے صورتحال پر تبادلہ خیال بھی کیا۔ انہوں نے وزیر داخلہ ملک حبیب کو فوری طور پر کراچی پہنچنے کا حکم دیتے ہوئے ہدایت کی ہے کہ ایم کیو ایم کے الیکشن دفاتر پر بم دھماکوں کی صورتحال کا جائزہ لیں۔متحدہ قومی موومنٹ نے کل سندھ بھر میں یوم سوگ منانے کا اعلان کیا ہے۔ بلاول بھٹوزرداری کی کراچی میں دھماکوں کی مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ دھماکے بزدلانہ اورغیرانسانی ہیں۔اُن کا کہنا ہے کہ دھماکوں کے ذریعے شہریوں میں خوف وہراس پھیلایاجارہاہے۔ واضح رہے کہ ایم کیو ایم کے دفتر کے قریب یہ پانچواں حملہ تھا۔ اس سے قبل پیپلز چورنگی، نصرت بھٹو کالونی، قصبہ کالونی اور برنس روڈ پر ایم کیو ایم کے انتخابی دفاتر کو نشانہ بنایا گیا تھا جس میں متعدد افراد جاں بحق اور زخمی ہوگئے تھے۔

مزید : کراچی /Headlines