ترقی پذیر ملکوں میں امریکی سفارت کارحکومت پر گہرا اثررکھتے ہیں، سابق امریکی سفیر

ترقی پذیر ملکوں میں امریکی سفارت کارحکومت پر گہرا اثررکھتے ہیں، سابق امریکی ...

  

 واشنگٹن (آن لائن ) فجی کے لیے سابق امریکی سفیر محمد عثمان صدیق کا کہناہے کہ پالیسیاں ملکی مفادات اور معروضی حالات کے تابع ہوتی ہیں۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق ایک انٹرویو میں عثمان صدیق نے کہا ہے کہ ’اس میں کوئی شک و شبہ نہیں کہ تیسری دنیا اور ترقی پذیر ملکوں میں امریکی سفارت کار وہاں کی سیاست اور حکومت پر گہرا اثر و رسوخ رکھتے ہیں؛ اور امریکی سفیر کو سفارتی کمیونٹی میں ایک بہت طاقت ور اور توانا شخصت کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ امریکہ ایک معاشرتی طاقت ہونے کے ساتھ ساتھ دنیا کی ایک اہم ترین فوجی اور اقتصادی قوت بھی ہے‘۔عثمان صدیق کا کہنا تھا کہ امریکی سفارت کاروں کو اپنی اس طاقت کا استعمال بڑی دانش مندی کے ساتھ استعمال کرنا چاہیئے، اور ان کے خیال میں،۔سابق سفیرنے یوکرین اور شام کے حالات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ، ’آج کے دور میں سفارت کاری ایک مشکل کام بن چکا ہے اور ہمارے بہت سے سفارت کار انتہائی مشکل حالات میں اگلے محاذوں پر کام کر رہے ہیںو۔ ‘ واضح رہے کہ عثمان صدیق اپنی نوجوانی کا کچھ عرصہ کراچی اور پشاور میں گزار چکے ہیں۔ وہ کراچی یونیورسٹی کے طالب علم بھی رہے ہیں ۔

مزید :

عالمی منظر -