عوامی احتجاج بھارت نوا رہنماوں کیلئے چشم کشا ہے

عوامی احتجاج بھارت نوا رہنماوں کیلئے چشم کشا ہے

  

سری نگر(کے پی آئی) کل جماعتی حرےت کانفرنس (ع) کے چیئرمین میرواعظ عمرفاروق نے عوامی احتجاج کو بھارت نوا رہنماوں کیلئے چشم کشا قراردیتے ہوئے کہاکہ انتخابی عمل ایک لا حاصل مشق کے سوا کچھ بھی نہیں۔ انہوں نے شہرخاص میں کرفیوکے مسلسل نفاذ کو انتقام گیری سے تعبیرکرتے ہوئے الزام لگایاکہ تاریخی جامع مسجد سمیت کئی مساجدمیں نمازجمعہ کی ادائیگی پربھی پابندی رکھی گئی۔

میرواعظ نے جمعتہ المبارک کے متبرک موقعے پر شہر سرینگر میں لگاتار اعلانیہ اور غیر اعلانیہ کرفیو کے نفاذ سے کشمیر کی مرکزی عبادت گاہ جامع مسجد سرینگر سمیت دیگر اہم مذہبی مقامات میں نماز جمعہ کے اجتماعات کو نا ممکن بنانے کی حکومتی کاروائیوں پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے اس کی پرزور مذمت کی ہے۔ حریت (ع)چیئرمین نے عام لوگوں کو بدستور مسلسل اور سخت ترین کرفیو میں رکھ کر انہیں بنیادی ضروریات زندگی سے محروم رکھنے کی کارروائی کو حکمرانوں کی طرف سے انتقام گیرانہ رویہ قرار دیا۔ میرواعظ نے کہا کہ آج ازخود دوسرے دن بھی کشمیری عوام نے ہڑتال اور بھر پور احتجاج کر کے ظلم و تشدد قتل و غارت گری ، انسانی حقوق کی پامالیوں اور طاقت کے بل پر انتخابی ڈرامے رچانے کے خلاف جس طرح اپنے مجروح جذبات کا اظہار کیا وہ مقامی حکومت اور حکومت ہند کے لئے نہ صرف چشم کشا ہے بلکہ اس سے اس امر کی تصدیق ہوتی ہے کہ جہاں انسانی جان و مال فوج کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہو اور لوگ عدم تحفظ کے شکار ہو ں ،وہاں اس طرح کا انتخابی عمل ایک لا حاصل مشق کے سوا کچھ نہیں۔ انہوںنے کہا کہ شہید بشیر احمد بٹ کی بہیمانہ ہلاکت پر حکومت اور بھارت نواز جماعتوں کو مگرمچھ کے آنسو بہانے کے بجائے اس قتل میں ملوث افراد کو کیفر کردار تک پہنچانا چاہئے۔حریت(ع) چیئرمین نے فورسز کے ہاتھوں بلا جواز فائرنگ کے نتیجے میں زخمی افراد جن میں معصوم سہیل احمد کینو ولد بلال احمد کینو سکونت مہاراج گنج،جو ونٹیلیٹر پر موت و حیات کی کشمکش میں مبتلا ہے، کی فوری صحت کے لئے دعا کی۔

مزید :

عالمی منظر -