مکئی کی زیادہ پیداوار اہم سنگ میل ثابت ہوگی ،پروفیسرڈاکٹر اقرار احمد خاں

مکئی کی زیادہ پیداوار اہم سنگ میل ثابت ہوگی ،پروفیسرڈاکٹر اقرار احمد خاں

  

فیصل آباد(این این آئی)زرعی یونیورسٹی فیصل آبادکے وائس چانسلر پروفیسرڈاکٹر اقرار احمد خاں نے کہا ہے کہ بڑھتی ہوئی انسانی آبادی کیلئے سستی غذاءکی فراہمی اور گندم پر انحصار کم کرنے کیلئے مکئی کی زیادہ پیداوار اور استعمال اہم سنگ میل ثابت ہوگا کیونکہ پاکستان میں بھارت کے مقابلے میں مکئی کی پیداواری ٹیکنالوجی کو بہترانداز میں آگے بڑھانے کے زیادہ مواقع موجود ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے زرعی یونیورسٹی میں شعبہ پی بی جی کے زیراہتمام مکئی کے پیداواری رجحانات پر منعقدہ ایک روزہ کانفرنس سے مہمان خصوصی کے طور پر اپنے خطاب میں کیا۔ڈاکٹر اقرار احمد خاں نے کہاکہ پاکستان میں سبز انقلاب سے قبل مکئی کو مکمل غذاءکے طور پر استعمال کیا جاتا رہا ہے لہٰذا اس کے گھریلواستعمال کیلئے قابل عمل ٹیکنالوجی سامنے لائی جانی چاہئے تاکہ اسکے آٹے سے بننے والی روٹی زیادہ دیر تک تازہ اور قابل استعمال رکھی جا سکے۔ انہوں نے کہاکہ موسمیاتی تغیرات‘ کم ہوتے ہوئے زمینی و آبی وسائل کے تناظر میں بڑھتی ہوئی غذائی ضروریات کیلئے حکومتی اور پرائیویٹ اداروں کو مشترکہ کاوشیں بروئے کار لانا ہونگی تاکہ پیداوار ی بڑھوتری میں تسلسل سے فوڈ سیکورٹی کے چیلنجز سے نبردآزما ہونے کی حکمت عملی ترتیب پا سکے۔ ان کا کہنا تھا کہ بڑھتی ہوئی آبادی کو مطلوبہ شرح میں نیوٹریشن سے بھرپور غذاءکی فراہمی کیلئے پبلک و پرائیویٹ اداروں کو مل کر کام کرنا ہوگا۔ ڈین کلیہ زراعت ڈاکٹر محمد ارشد نے کہا کہ ترقی یافتہ ممالک کی طرز پر پاکستان میں بھی حکومتی اور پرائیویٹ اداروں میں تعاون اور اشتراک بڑھایاجانا چاہئے تاکہ نہ صرف پیداوار میں اضافہ ممکن ہوسکے بلکہ دیگر اقدامات کے ذریعے غذائی استحکام کو بھی یقینی بنایاجا سکے۔ انہوں نے کہاکہ سائنس دانوں اور حکومتوں کو بڑھتے ہوئے انسانی سیلاب کیلئے نہ صرف زیادہ غذاءپیدا کرنی ہے بلکہ ہر فرد تک اس کی ارزاں رسائی کا اہتمام بھی ان کی ذمہ داریوں کا حصہ ہوگا۔

پاکستان میں سمٹ کے نمائندہ ڈاکٹر امتیازنے بتایا کہ ان کا ادارہ 1960ءکی دہائی سے پاکستانی اداروں اور سائنس دانوں کے ساتھ ملک کر اہم فصلات کی پیداواری ٹیکنالوجی کو فروغ دے رہا ہے تاکہ اس کے ذریعے کسانوں کی آمدنی اور عوام کیلئے زیادہ غذا کی فراہمی یقینی بنائی جا سکے۔ انہوں نے اُمید ظاہر کی کہ کانفرنس کے ذریعے پبلک و پرائیویٹ اشتراک عمل میں اضافہ ہوگا جس سے مشترکہ اہداف کے حصول میں آسانی ہوگی۔ شعبہ پی بی جی کے چیئرمین ڈاکٹر عبدالسلام خاں نے کہاکہ گزشتہ دہائیوں کے دوران انسانی و حیوانی غذاکے ساتھ ساتھ مکئی کا استعمال فارماسیوٹیکل اور دوسری صنعتوں میں بھی بڑھتاجا رہا ہے جس کی وجہ سے مکئی کے زیرکاشت رقبے میں 40فیصد اضافہ کے ساتھ پیداوار میں 100فیصد اضافہ ہوا ہے۔ ڈائریکٹر اورک ڈاکٹر آصف علی خاں نے منتظمین اور شرکاءکا شکریہ ادا کیا جبکہ شعبہ کے جواں سال استاد ڈاکٹر محمداسلم نے نقابت کے فرائض ادا کئے۔

مزید :

کامرس -