بلدیاتی ایکٹ قانون نہیں بنا، مخالفت میں درخواستگزار پہلے آگئے: ہائیکورٹ 

بلدیاتی ایکٹ قانون نہیں بنا، مخالفت میں درخواستگزار پہلے آگئے: ہائیکورٹ 

  



لاہور(نامہ نگارخصوصی(لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس مامون رشید شیخ نے سابق وفاقی وزیر احسن اقبال کے بیٹے اور مسلم لیگ (ن) کے چیئرمین ضلع کونسل نارووال کی لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2019 ء کے خلاف دائردرخواست ناقابل سماعت قراردے کر مسترد کر دی۔سرکاری وکیل کی طرف سے عدالت کو بتایا گیا کہ پنجاب اسمبلی سے منظور شدہ اس قانون پر ابھی تک گورنر نے دستخط نہیں کئے،جس پرفاضل جج نے درخواست گزارسے کہا ابھی تک منظورِ شدہ بل پر گورنر نے دستخط نہیں کئے،ابھی اسے ایکٹ کا درجہ نہیں ملا،ایسی صورت میں اس کے خلاف درخواست کیسے دائر کی جاسکتی ہے۔عدالت نے درخواست مسترد کر دی۔مزید براں لاہور ہائی کورٹ نے لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2019 ء کے خلاف میئرلاہوراورڈپٹی میئرزکی درخواست قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے کی بابت فریقین سے مزید دلائل طلب کرتے ہوئے سماعت9مئی تک ملتوی کردی۔فاضل جج نے درخواست گزاروں سے کہا کہ ابھی قانون تو بنا نہیں اور آپ اس کے خلاف عدالت میں آگئے ہیں، درخواست گزاروں کے وکیل احسن بھون نے کہا کہ وہ درخواست کے قابل سماعت ہونے کو ثابت کرنے کی کوشش کریں گے، فاضل جج نے کہا کہ بل منظور ہونے کے بعد قانون کاحصہ بننے سے قبل اس کے خلاف درخواست قابل سماعت نہیں، احسن بھون نے کہا کہ اگر عدالت مہلت دے تو وہ کچھ دلائل دینا چاہتے ہیں، ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے درخواست کی مخالفت کی، فاضل جج نے میئر لاہور کرنل ریٹائرڈ مبشر جاوید کی طرف دیکھ کر ریمارکس دیئے کہ یہ ابھی تک میئر ہیں، رمضان آرہاہے،اس بابت بھی ان سے باز پرس کرنی ہے،یہ دفتر میں بیٹھے رہتے ہیں اور کہتے ہیں ڈی سی کی ذمہ داری ہے۔عدالت نے درخواست کے قابل سماعت ہونے کی بابت مزید دلائل طلب کرتے ہوئے سماعت 9مئی تک ملتوی کردی۔

مزید : علاقائی