پلیٹ فارم پر کھڑی قرنطینہ کوچ میں آتشزدگی

پلیٹ فارم پر کھڑی قرنطینہ کوچ میں آتشزدگی

  

لاہور ریلوے سٹیشن پر کھڑی قرنطینہ کوچ میں آگ لگ گئی، ڈویژنل سپرنٹنڈنٹ ریلوے نے یہ معلوم کرنے کے لئے تحقیقات کا حکم دے دیا ہے کہ کھڑی بند کوچ میں شارٹ سرکٹ سے آگ کیسے لگ گئی۔ یہ تو خیر تحقیقات ہی سے پتہ چلے گا، لیکن ریلوے میں ایسے پُراسرار واقعات ہوتے رہتے ہیں، چند ماہ پہلے تیز گام کی بوگی میں آگ لگی تھی، جس کے بارے میں یہ موقف اختیار کیا گیا تھا کہ گاڑی میں ایسے مسافر سوار ہو گئے تھے، جن کے پاس گیس کے سلنڈر تھے جو آگ کا باعث بنے، پھر تحقیقاتی رپورٹ میں یہ نتیجہ نکالا گیا کہ آگ شارٹ سرکٹ سے لگی، معلوم نہیں اِن میں کون سا موقف درست تھا،لیکن چلتی ٹرین میں شارٹ سرکٹ کی سمجھ تو آتی ہے۔ ایک ایسی کوچ میں،جو بند تھی شارٹ سرکٹ کیسے ہو گیا؟ اِس بات کا امکان البتہ موجود ہے کہ مریضوں کی عدم موجودگی میں پلیٹ فارم پر موجود عملے میں سے کسی نے کوچ کو آرام کرنے کے لئے استعمال کیا ہو اور بجلی کے آلات چلائے گئے ہوں۔ تحقیقات سے پہلے ہی بعض معطلیاں بھی ہو گئی ہیں بہتر تھا کوئی اقدام اٹھانے سے پہلے انتظار کر لیا جاتا، ذمے داری کا تعین کرنے سے قبل سزائیں دے دینا کوئی اچھی روایت نہیں ہے۔

مزید :

رائے -اداریہ -