مہمند، پا ک افغان سرحدی علاقہ خویزئی بائیز ئی کے عوام مختلف مشکلات سے دوچار

  مہمند، پا ک افغان سرحدی علاقہ خویزئی بائیز ئی کے عوام مختلف مشکلات سے دوچار

  

مہمند (نمائندہ پاکستان) مہمند، قبائلی ضلع مہمند میں پاک افغان سرحدی علاقہ خویزئی بائیزئی کے عوام مختلف مشکلات سے دو چار۔ کورونا وائرس کی وجہ سے غریب لوگوں کی مزدوری ختم ہو کر دو ماہ سے گھروں میں بے روزگار بیٹھے ہیں۔ احساس پروگرام میں شامل ہونے کیلئے نیٹ ورک نہ ہونے کی وجہ سے ادھورا رہ چکا ہے۔ حکومت یا دوسرے مخیر حضرات کی جانب سے کوئی امداد نہیں دی گئی ہے۔ پاک افغان شاہراہ بند ش سے بھی ہزاروں لوگ بے روزگار ہو چکے ہیں۔ علاقے میں بجلی، تعلیم، صحت، مواصلات، سڑکیں، پینے کیلئے صاف پانی کو عوام ترس رہے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار گانڑے بازار کے دکانداروں، عوام، مشران و سماجی لوگوں ملک حاجی نورا جان، نعمت اللہ، اسلام خان، محست خان و دیگر نے خویزئی میں اخباری نمائندوں کو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ جدید دور میں بھی بائیزئی سب ڈویژن جو کہ پاک افغان سرحدی دیہات پر مشتمل ہے، موجودہ کورونا وائرس کی وجہ سے یہاں کے رہائشی جو کہ زیادہ تر راولپنڈی، پشاور، لاہور و ملک کے دیگر اضلاع میں مخنت مزدوری کر کے اپنے بچوں کے پیٹ پالتے تھے اب کورونا وائرس کے پیش نظر لاک ڈاؤن کی وجہ سے یہاں کے سب دہاڑی دار و مزدور کار لوگ اپنے علاقوں کو آچکے ہیں۔ ان لوگوں کے پاس جو نقد رقم تھی وہ ماہ رمضان میں ختم ہو گئی ہے۔ مگر اب تک حکومتی یا پارلیمنٹرین یا دیگر مخیر حضرات کی طرف سے کوئی خصوصی امداد نہیں دی گئی ہے۔ اور نیٹ ورک نہ ہونے کی وجہ سے احساس کفالت پروگرام کے ثمرات سے بھی ہم لوگ محروم ہو چکے ہیں۔ بارہ ہزار روپے بھی بہت کم لوگوں کو مل چکے ہیں َ ایک طرف پاک افغان شاہراہ بند پڑا ہے، سکول، ہسپتال، سڑکیں، مواصلات، پینے کیلئے صاف پانی اور بے روزگاری نے عوام کی زندگی تنگ کر رکھی ہے۔ اعلیٰ حکام نوٹس لیکر ان مشکلات پر قابو پا ئے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -