پی سی بی نے کنسلٹنسی سروسز کی اہلیت کے معیار میں جوئے کی ڈیل کا تجربہ بھی شامل کر لیا، انتہائی حیران کن خبر آ گئی

پی سی بی نے کنسلٹنسی سروسز کی اہلیت کے معیار میں جوئے کی ڈیل کا تجربہ بھی شامل ...
پی سی بی نے کنسلٹنسی سروسز کی اہلیت کے معیار میں جوئے کی ڈیل کا تجربہ بھی شامل کر لیا، انتہائی حیران کن خبر آ گئی

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے کنسلٹنسی سروسز کی بولی دستاویزات میں دلچسپی رکھنے والی کمپنیز کی اہلیت کے معیار میں جوئے کے حوالے سے ڈیل کا تجربہ بھی شامل کر لیا ہے اور پی سی بی کے ڈائریکٹر میڈیا کا کہنا ہے کہ ایسا کسی بھی طرح کی کنفیوژن سے بچنے کیلئے کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق پی سی بی نے نئے میڈیا رائٹس معاہدے کی کنسلٹنسی سروسز کیلئے چند روز قبل اشتہار جاری کیا تھا اور اس حوالے سے ٹینڈر جمع کرانے کی آخری تاریخ 14 مئی مقرر کی گئی ہے۔ اس کی بولی دستاویز کے مطابق بورڈ نے دلچسپی رکھنے والی کمپنیز کی اہلیت کا جو معیار مقار کیا ہے اس میں میڈیا رائٹس، سپانسرشپ اور جوئے کے حوالے سے ڈیل کا تجربہ بھی شامل ہے۔

یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کے میچز ایک غیرملکی جوئے کی ویب سائٹ پر لائیو دکھائے گئے جس پر شرطیں لگائی گئیں اور اس پر پی سی بی کا کہنا تھا کہ میڈیا پارٹنر نے اسے بتائے بغیر یہ حقوق اس ویب سائٹ کوبیچے، اس حوالے سے خط و کتابت جاری ہے۔

میڈیا کنسلٹنسی سروسزکی بڈ دستاویز کے حوالے سے پی سی بی کے ڈائریکٹر میڈیا سمیع الحسن برنی نے کہا کہ پاکستان میں بیٹنگ رائٹس کبھی نہیں بیچے گئے اور اب بھی دستیاب نہیں ہیں جبکہ پی سی بی کبھی کسی طرح کے جوئے کو پروموٹ نہیں کرنا چاہتا، ہم نے بولی کی دستاویز میں ایسا اس لئے لکھا کہ شفافیت برقرار رہے اور بعد میں کوئی کنفیوژن نہ ہو، اس سے ہمارے اینٹی کرپشن یونٹ کو بھی مدد ملے گی۔

واضح رہے کہ کنسلٹنسی رائٹس معاہدے میں کامیاب ہونے والی کمپنی کو50 ہزار ڈالر (تقریباً 80 لاکھ روپے) فیس ملے گی جبکہ معاہدے کے بعد کچھ فیصد کمیشن بھی دیا جائے گا۔ منتخب کمپنی 2020ءسے 2023ءتک کے میڈیا کنٹریکٹ کی مالیت و دیگر حوالے سے جائزہ لے کر پی سی بی کو مشورے دے گی،براڈ کاسٹر سے مذاکرات بھی اسی کو کرنا ہوں گے۔

مزید :

کھیل -