محکمہ سی اینڈ ڈبلیو بلڈنگز ڈ یپارٹمنٹ لاہور: ملازمین کی جانب سے کنسٹرکشن کمپنیاں بناکر 3ارب روپے خوردبرد کرنے کا انکشاف 

  محکمہ سی اینڈ ڈبلیو بلڈنگز ڈ یپارٹمنٹ لاہور: ملازمین کی جانب سے کنسٹرکشن ...

  

 لاہور(سپیشل رپورٹر)محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کے بلڈنگز ڈیپارٹمنٹ لاہور میں ایگزیکٹو انجینئرز کی مبینہ ملی بھگت سے سرکاری ملازمین کی جانب سے کنسٹرکشن کمپنیاں بناکر قومی خزانے کے 3ارب روپے خورد بردکرنے کاانکشاف ہواہے   تفصیلات کے مطابق باوثوق ذرائع سے معلوم ہواہے کہ محکمہ کمیونی کیشن ورکس ڈیپارٹمنٹ چیف انجینئرسنٹرل زون لاہور اورچیف انجینئرایم اینڈ آر بلڈنگ ڈویژن لاہور کی تمام بلڈنگزڈویژن میں مذکورہ ایگزیکٹو انجینئرز نے اپنے ماتحت عملہ کے ساتھ ساز باز کرکے ان کے عزیز واقارب کے نام مختلف ناموں سے کنسٹرکشن کمپنیوں کے لائسنس جاری کررکھے ہیں جن میں بلڈنگ سیکنڈ ڈویژن لاہور کے ایس ڈی او فرخ نے اپنے بیٹے طلحہ کے نام حفیظ بلڈرز بنا رکھی ہے جس کے ذریعے بوگس کوٹیشنز کی مد میں قومی خزانے سے کروڑوں روپے نکلواکر آپس میں بند ربانٹ کرلئے ذرائع نے مزید بتایا کہ اسی طرح ایم اینڈآر بلڈنگز افسران نے بھی اپنی عزیزو اقارب کے نام فرمیں بنا کر قومی خزانہ سے مینٹیننس کی مد میں کروڑوں روپے خورد برد کرلئے  ذرائع نے بتایا کہ حکومت پنجاب کے تمام سرکاری دفاترز،سرکاری بلڈنگز جن میں ہسپتال،گرلز کالجز،سکولز،محکمہ جنگلات،محکمہ زراعت، محکمہ ریونیو وغیرہ کی عمارتوں کی تزئین وآرائش کے لئے جولائی 2018ء تاجون 2021ء تک تقریباً 3ارب روپے کے فنڈزجاری کئے گئے جن کو مذکورہ ایگزیکٹو انجینئرز نے بوگس کوٹیشنز اور ان ملازمین کی فرموں کو ٹینڈرز الاٹ کرکے کروڑوں روپے کی بوگس انٹریاں ڈال کر رقم خورد برد کرلی ذرائع نے مزید بتایا کہ مذکورہ افسران محکمہ سی اینڈ ڈبلیو کے ایڈیشنل سیکرٹریز ٹیکنکل کو 30فیصد ایڈوانس کمیشن دے کر فنڈز ریلیز کرواکر بعدازاں آپس میں بندر بانٹ کرلیتے ہیں، اس حوالے سے سیکرٹری سی اینڈ ڈبلیو کا کہناہے کہ ذمہ داران کے خلاف غیر قانونی طریقہ سے فرمیں رجسٹرڈ کروانے پرانکوائری کرکے بھرپور کارروائی کی جائے گی۔

انکشاف

مزید :

صفحہ آخر -