لاک ڈاؤن، حکومت تاجر برادری سے مشاورت کرے، سلیمان صدیقی

 لاک ڈاؤن، حکومت تاجر برادری سے مشاورت کرے، سلیمان صدیقی

  

ملتان (نیوز رپورٹر) حکومت کی جانب سے کورونا وبا کو کنٹرول کرنے اور انسانی جانوں کے مزید ضیاع کی روک تھام کے لیئے سمارٹ لاک ڈاون سمیت ضلعی انتظامیہ، پولیس اور رینجرز کی خدمات حاصل کرنے کے باوجود بازاروں میں شہریوں کے اژدھام نے حکومت کے تمام احتیاطی اقدامات اور سماجی فاصلے کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے کورونا کے مریضوں کی شرح میں اضافہ کا باعث بن رہے ہیں دوسری طرف حکومت کی جانب سے یہ خبریں زبان زد عام ہیں (بقیہ نمبر47صفحہ7پر)

کہ حکومت نے ملک بھر کے متعدد شہروں میں مکمل لاک ڈاون لگانے کا فیصلہ کرلیا ہے اس متوقع فیصلے پر تاجر رہنماوں نے پاکستان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ تاجر برادری بھی اسی قوم کا حصہ ہے اور ہم کبھی نہیں چاہیں گے کہ ملک میں مزید جانی ضیاع ہو لیکن بدقسمتی سے حکومت کسی بھی شعبہ زندگی سے متعلق فیصلے کرتی ہے اسے کم از کم ان سے مشاورت ضرور کرنی چاہیئے فیصلے مشاورت سے کیئے جاتے ہیں ناکہ تھوپے جاتے ہیں۔ تاجر رہنما خواجہ سلیمان صدیقی، محمد اختر بٹ، جعفر علی شاہ، سلطان محمود ملک، عارف فصیح اللہ، چوہدری محمود علی، غضنفر ملک اور میاں آفاق انصاری نے کہا کہ اگر حکومت نے مکمل لاک ڈاون لگانا تھا تو پھر ہفتہ اور جمعہ کے روز لاک ڈاون لگانے کا جواز نہیں تھا بلکہ انتظامیہ جس طرح آج متحرک و مستعد ہوکر ایس او پیز پر عملدرآمد کروارہی ہے اگر یہی اقدام پچھلے سال کورونا کے آغاز میں ہی کرلیا جاتا تو آج صورتحال قدرے بہتر ہوچکی ہوتی لیکن ہماری حکومتیں تب حرکت میں آتی ہیں جب پانی سر سے گزر جاتا ہے انہوں نے کہا کہ اس وقت حکومت سمیت پوری قوم حالت جنگ میں ہے ہم کبھی نہیں چاہیں گے کہ لوگوں کی زندگیوں کو خطرے میں ڈالیں انہوں نے کہا کہ اگر تاجروں بارے فیصلے صوبائی سطح پر کیئے جائیں تو پھر تاجروں کی نمائندگی کو بھی یقینی بنائیں تب ہی بہتر فیصلے ممکن ہوسکتے ہیں انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت مارکیٹوں میں 70 فیصد صارفین و خریدار ایس او پیز پر عمل کررہے ہیں جبکہ انتظامیہ اور پولیس اہلکاروں کی اکثریت عمل نہیں کررہی متعدد مارکیٹوں پر درجن بھر پولیس والے ایس او پیز کو یقینی بنانے کے لیئے تعینات کیئے گئے ہیں لیکن وہ دن بھر مارکیٹ میں گشت کرنے کی بجائے مارکیٹوں کے اے سی ماحول میں براجمان رہتے ہیں انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ مکمل لاک ڈاون مسئلے کا ہرگز حل نہیں ہے بلکہ انتظامیہ ایس او پیز پر عملدرآمد کروائے مکمل لاک ڈاون سے چھوٹے تاجروں سخت متاثر ہوں گے اور حکومتی اقدام تاجروں کے معاشی قتل کے مترادف ہوگا لاکھوں گھروں کے چولہے ٹھنڈے پڑ جائیں گے۔ 

سلیمان صدیقی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -