این اے 249 کراچی میں دوبارہ گنتی کی مفتاح اسماعیل کی درخواست منظور، 6 مئی کو دوبارہ گنتی ہو گی

این اے 249 کراچی میں دوبارہ گنتی کی مفتاح اسماعیل کی درخواست منظور، 6 مئی کو ...
این اے 249 کراچی میں دوبارہ گنتی کی مفتاح اسماعیل کی درخواست منظور، 6 مئی کو دوبارہ گنتی ہو گی

  

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن) این اے 249کے ضمنی انتخابات میں دوبارہ گنتی کی مفتاح اسماعیل کی درخواست منظور کر لی گئی ، 6 مئی کو صبح 9 بجے ووٹوں کی دوبارہ گنتی ہو گی ، الیکشن کمیشن نے تمام جماعتوں کو 6 مئی کو آر او آفس پہنچنے کی ہدایت کردی۔

نجی ٹی وی سماء نیوز کے مطابق مفتاح اسماعیل کی درخواست پر چیف الیکشن کمیشن کی سربراہی میں چار رکنی کمیشن نے سماعت کی ، مسلم لیگ ن کی جانب سے سلمان اکرم راجہ اور پیپلزپارٹی کے وکیل لطیف کھوسہ نے دلائل دیے،  پیپلزپارٹی کے رہنما قادر خان مندوخیل اور نیئر بخاری بھی سماعت میں موجود تھے ۔ 

سلمان اکرم راجہ نے کہا کہ صرف دوبارہ گنتی کافی نہیں ، الیکشن کمیشن کو مداخلت بھی کرناہوگی ، ممبر سندھ الیکشن کمیشن نثار درانی نے کہا کہ قانون میں ہے کہ دوبارہ پولنگ ایک یازائد پولنگ سٹیشنز پر ممکن ہے جس پر مسلم لیگ ن کے وکیل نے کہا کہ ایک سے زائد پولنگ سٹیشنز کا مطلب پورا حلقہ بھی ہو سکتاہے ،بڑی تعداد میں پریزائیڈنگ افسران نے فارم 45پر دستخط نہیں کئے ، این اے 249 کے 167سٹیشنز کے فارم 45پر دستخط موجود نہیں ، ہمارے پولنگ ایجنٹس کو فارم 45بھی جاری نہیں کئے گئے جس پر ممبر الیکشن کمیشن سندھ نے پوچھا کہ آپ کے ایجنٹس کو فارم 45نہیں دئے گئے یا ان پر دستخط موجود نہیں تھے ؟۔

پاکستان پیپلزپارٹی کے وکیل لطیف کھوسہ نے دلائل میں کہا کہ ہر ہارنے والا کہتا ہے کہ انتخابی عمل مشکوک تھا ،پولنگ کے دوران مسلم لیگ ن نے کسی فورم پر کوئی شکایت نہیں کی ، صرف یہ کہنا کافی نہیں کہ بے ضابطگیاں ہوئیں، نشاندہی بھی کرنا ہوگی کہ کہاں کہاں بے ضابطگیاں ہوئیں ،ریٹرننگ افسر دوبارہ گنتی کی درخواست منظور کرنے کا پابند نہیں ۔

چیف الیکشن کمیشن نے کہا کہ مسلم لیگ ن کا نقطہ امیدواروں میں ووٹوں کا فرق پانچ فیصد سے کم ہونا ہے۔ لطیف کھوسہ نے کہا کہ پانچ فیصد سے کم فرق پر دوبارہ گنتی ممکن ہے، ریٹرننگ افسر کو بھی مفتاح اسماعیل نے عمومی د رخواست دی تھی ، لگتا ہے مفتاح اسماعیل نے پہلے سے درخواست تیار کر رکھی تھی ، ریٹرننگ افسر کو درخواست میں کہا گیا نتائج جس اندا زمیں آئے وہ مشکوک ہے ،ریٹرننگ افسر کا کام تھا کہ نتیجہ جاری کرتا، کیا ریٹرننگ افسر الیکشن کمیشن کے حکم امتناع کا انتظار کر رہے تھے ۔ ممبر الیکشن کمیشن پنجاب نے کہا کہ کیس پولنگ سٹیشن کا نہیں آر او کے حکم کے خلاف ہے ۔

سربراہ پاک سر زمین پارٹی مصطفی کمال کے وکیل نے اپنے دلائل میں کہا کہ الیکشن کمیشن کو بے شمار ای میلز کیں لیکن جواب نہیں آیا ، ممبر الیکشن کمیشن بلوچستان نے کہا کہ آپ کی درخواست آئے گی تو ضرور سنیں گے ۔ ممبر پنجاب نے کہا کہ ن لیگ کو بھی دوبارہ گنتی کی درخواست تک محدود کیا ہے ۔چیئرمین الیکشن کمیشن نے کہا کہ کسی قسم کی بے ضابطگی برداشت نہیں کریں گے ۔

الیکشن کمیشن میں کالعدم ٹی ایل پی کے وکیل بھی پیش ہوئے جنہوں نے اپنے دلائل میں کہا کہ پولنگ سٹیشنز سے پولنگ ایجنٹس کو باہر نکال دیا گیا ، وکیل کالعدم ٹی ایل پی جانب سے الیکشن کمیشن میں گلی سے ملا ہوا بیلٹ پیپر پیش کیاگیا۔

الیکشن کمیشن نے سب کے دلائل سننے کے بعد فیصلہ محفوظ کرلیا تھا جو قریب ڈھائی گھنٹے بعد سنایا گیا جس میں مفتاح اسماعیل کی ووٹوں کی دوبارہ گنتی کی درخواست منظور کی گئی ۔

مزید :

اہم خبریں -