تھر کول سے 500 سال تک 5000 میگاواٹ بجلی پیدا کی جا سکتی ہے

تھر کول سے 500 سال تک 5000 میگاواٹ بجلی پیدا کی جا سکتی ہے

اسلام آباد (اے پی پی) تھر میں کوئلہ کے ذخائر 175 ارب ٹن سے زائد ہیں۔ آر ڈبلیو ای جرمنی کی رپورٹ کے مطابق تھر میں کوئلہ کے ذخائر کے بلاک نمبر 2 میں کوئلہ کے مجموعی ذخائر کے ایک فیصد کے قریب ذخائر موجود ہیں جن میں سے 1.57 ارب ٹن کان کنی کے قابل ہیں جس سے 500 سال تک 5000 میگاواٹ بجلی پیدا کی جا سکتی ہے۔ رپورٹ کے مطابق اس وقت دنیا بھر میں 41 فیصد بجلی کوئلہ کی مدد سے پیدا کی جا رہی ہے جبکہ پاکستان میں بجلی کی مجموعی قومی پیداوار کا صرف 0.1 فیصد حصہ کوئلہ سے پیدا کیا جاتا ہے۔ دنیا بھر میں کوئلہ کی مدد سے 41 فیصد، گیس سے 21 فیصد، پانی سے 16 فیصد، نیوکلیئر ٹیکنالوجی سے 13 فیصد جبکہ تیل سے 5 فیصد اور متبادل ذرائع سے 3 فیصد بجلی پیدا کی جا رہی ہے۔

 آر ڈبلیو ای کے مطابق پاکستان میں تیل کی مدد سے 36 فیصد، گیس سے 29 فیصد اور پانی سے 29 فیصد بجلی پیدا کی جاتی ہے۔ اسی طرح بھارت اور چین میں کوئلہ کی مدد سے بالترتیب 68 اور 79 فیصد بجلی پیدا کی جاتی ہے۔ شعبہ توانائی کے ماہرین نے کہا ہے کہ موجودہ حالات میں توانائی کے بحران پر قابو پانے کا واحد حل کوئلہ کی مدد سے سستی بجلی پیدا کرکے بڑھتی ہوئی قیمتوں کے ساتھ ساتھ تیل کے درآمدی بل میں کمی کی جا سکتی ہے جس سے ادائیگیوں کے توازن کو بہتر بنانے میں بھی مدد ملے گی۔

مزید : کامرس