صنعتی سیکٹر کو سپلائی کی معطلی کے باوجودگھریلو سطح پر گیس کا شدید بحران

صنعتی سیکٹر کو سپلائی کی معطلی کے باوجودگھریلو سطح پر گیس کا شدید بحران

لاہور(خبر نگار) صنعتوں اور سی این جی سیکٹر کو گیس کی سپلائی معطل رکھنے کے باوجود گھریلو سطح پر گیس بحران شدید صورتحال اختیار اورگیس کا شارٹ فال 1800ملین کیو بک فٹ تک پہنچنے کا امکان ہے۔ سردیوں میں گیس کی ڈیمانڈ اور سپلائی کے حوالے سے گیس کمپنی کے حاضر و ریٹائرڈ اعلیٰ افسران کا کہنا ہے کہ حالیہ سردیوں میں گیس بحران شدید ترین اور صنعتوں اور سی این جی سیکٹر میں گیس کی سپلائی معطل رکھنے کے باوجود گھریلو سیکٹر بری طرح متاثر رہے گا۔ اور سردیوں میں گھریلو میں صارفین کو گیس پریشر میں شدید ترین قلت کا سامنا کرنا پڑے گا۔ جس میں صنعتوں اور سی این جی سیکٹر کی گیس بند رکھتے سے بھی گیس بحران میں کوئی خاص کمی نہیں آئے گی۔ گیس کمپنی کے اعلیٰ افسران اپنے نام ظاہر کیے بغیر کہناہے کہ گیس ذخائر انتہائی کم اور سردیوں میں گیس کی ڈیمانڈ دوگنا شارٹ فال میں زمین و آسمان کا فرق آنے کا امکان ہے۔ جس کے باعث گیس شارٹ فال حیرت انگیز حد تک بڑھ جانے کا امکان ہے۔ سردیوں میں گیس بحران کنٹرول سے باہر رہے گا۔ اور سردیوں میں گھریلو صارفین کو گیس کی شدید ترین قلت کا سامنا کرنا پڑے گا۔ گیس کمپنی کے ریٹائرڈ افسران نے بتایا کہ سردیوں میں گھریلو سیکٹر بری طرح متاثر رہے گا۔ اور گیس حکام اور حکومت کی جانب سے گیس کی کمی کو پورا کرنے کے حوالے سے تمام پلان نے سود ثابت ہوں گے۔ اور گزشتہ سال کی نسبت اس سال سردیوں میں گیس بحران شدید ترین اور شہریوں کے احتجاج میں شدت رہے گی۔ جبکہ گیس کمپنی کے جی ایم اور ترجمان جواد نسیم سید کا کہنا ہے کہ گھریلو سطح پر گیس کی قلت کو پورا کیا جائے گا۔

گیس

مزید : صفحہ آخر