"پیار کے اظہار"کے لیے مہم چلانے والے بھارتیوں کو پولیس نے سبق سکھادیا

"پیار کے اظہار"کے لیے مہم چلانے والے بھارتیوں کو پولیس نے سبق سکھادیا

  

نیودہلی (نیوز ڈیسک) بھارت میں ایک طرف تو جدید مغربی کلچر کو اپنانے کا شوق عروج پر ہے اور دوسری طرف اسے پرتشدد طریقوں سے روکنے والے بھی سرگرم ہیں۔ کوزی کوٹ شہر کے ایک کافی ہاﺅس پر ایک شدت پسند تنظیم کے لوگوں نے یہ کہہ کر دھاوا بول دیا کہ یہاں نوجوان جوڑے ملاقاتیں کرتے ہیں۔ اس کے جواب میں بھارتی نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد نے ایک منفرد احتجاج کا فیصلہ کرلیا۔ ریاست کیرالہ کے ساحلی شہر کوچی میں ہزاروں نوجوانوں نے آزادانہ میل جول پر پابندیوں کے خلاف احتجاج کیلئے سرعام بوس و کنار کرنے کا منصوبہ بنایا۔ شہر کے مشہور مقام میرین ڈرائیو پر جمع ہوکر ”Kiss of Love“ نامی پیار بھرا احتجاج منعقد کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ مظاہرین کے موقع پر پہنچنے سے پہلے ہی شدت پسند تنظیموں کے ارکان بھی وہاں پہنچ گئے جس کے باعث آزادی کے اکثر متوالے گھروں سے باہر نہیں نکلے۔ تاہم مخالفین کی دھمکیوں کے باوجود چند درجن نوجوان لڑکیاں اور لڑکے ایک دوسرے کے بوسے لیتے ہوئے احتجاجی مقام کی طرف رواں دواں ہوئے لیکن پولیس نے انہیں راستے میں ہی دھرلیا اور گاڑیوں میں ٹھونس کر تھانے لے گئے۔ نوجوانوں کا موقف ہے کہ ان کا مقصد بوس و کنار سے لطف اندوز ہونا نہیں بلکہ شدت پسند وں کے خلاف احتجاج کرنا اور ان کی حوصلہ شکنی کرنا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -