تاریخی کامیابی ٹیم کی اجتماعی کوششوں کا نتیجہ ہے مصباح

تاریخی کامیابی ٹیم کی اجتماعی کوششوں کا نتیجہ ہے مصباح

  

                         ابوظہبی (سپورٹس ڈےسک)پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان اور سینئر بلے باز مصباح الحق نے کہا ہے کہ کینگروز کے خلاف ٹیسٹ سیریز میں تاریخی فتح ٹیم کا بڑا کارنامہ ہے، کامیابی ٹیم کی اجتماعی کوششوں کا نتیجہ ہے، کیویز کے خلاف شیڈول سیریز میں عمدہ کارکردگی کے تسلسل کو برقرار رکھنے کی کوشش کریں گے۔ پیر کو ابوظہبی ٹیسٹ میں کینگروز کے خلاف ریکارڈساز اور تاریخی فتح سمیٹنے کے بعد پریس کانفرنس کرتے ہوئے پاکستانی قائد نے کہا کہ سینئرز کھلاڑیوں کی عدم موجودگی کے جونیئرز نے جو دلیرانہ کارکردگی دکھائی وہ قابل ستائش ہے، مجھے اس بات کی خوشی ہے کہ ٹیم کو مستقبل کیلئے بہترین کھلاڑی مل گئے۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ دو سیریز میں میں شکستوں کے بعد ٹیم نے کینگروز کے خلاف جاندار کم بیک کیا ہے، بلے بازوں کی غیر معمولی کارکردگی کے بعد باﺅلرز کی عمدہ کارکردگی ٹیم کا پلس پوائنٹ ہے اگر ٹیم اسی طرح متحد ہو کر کھیلتی رہی تو ہمارے لئے کیوی ٹیم کو ہرانا مشکل نہیں ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ میں نوجوان کھلاڑیوں کی کارکردگی سے مطمئن اور خوش ہوں، کینگروز کے خلاف سیریز جیتنا آسان نہیں تھا لیکن ٹیم کے ہر کھلاڑی نے کھیل کے تینوں شعبوں میں اپنی ذمہ داری احسن طریقے سے نبھا ہر اس کو ممکن بنایا۔ ان کا کہنا ہے کہ کینگروز کے خلاف سیریز میں تاریخ ساز فتح کے بعد ٹیم کا مورال بلند ہے اور ہم پوری قوت اور جیت کی لگن کے ساتھ کیویز کے خلاف سیریز کیلئے میدان میں اتریں گے، ہمارا اگلا فوکس ورلڈ کپ پر ہے اور اس سے قبل ہم تمام خامیوں کو دور کرنے کی کوشش کریں گے۔دوسری طرف آسٹریلوی کرکٹ ٹیم کے کپتان اور مایہ ناز بلے باز مائیکل کلارک نے پاکستان کے ہاتھوں ٹیسٹ سیریز میں شکست پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ گرین شرٹس بیٹنگ و باﺅلنگ کے شعبے میں ہم سے اچھا کھیلی اسلئے وہ جیت کی حقدار تھی۔ پاکستان نے آسٹریلیا کو دو ٹیسٹ میچوں کی سیریز میں کلین سویپ شکست دی۔ پیر کو پاکستان کے ہاتھوں دوسرے ٹیسٹ میں شکست کے بعد کلارک نے اپنے بیان میں کہا کہ پاکستانی ٹیم کے کھلاڑیوں نے دونوں ٹیسٹ میچوں میں غیرمعمولی کارکردگی کا مظاہرہ کیا، بدقسمتی سے ہماری ٹیم کھیل کے ہر شعبے میں ناکام رہی جس کی وجہ سے ہمیں شکستوں کا سامنا کرنا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی کھلاڑیوں نے دونوں میچوں میں جو کارکردگی دکھائی اس پر وہ جیت کے ستحق تھے تاہم ہماری ٹیم کے کھلاڑیوں کو چاہیے کہ وہ غلطیوں سے سبق سیکھیں اور مستقبل میں بہتر کھیل پیش کرنے کی کوشش کریں۔ ان کا کہنا ہے کہ بدقسمتی سے ایشیائی سرزمین پر ٹیم کا ٹریک ریکارڈ اچھا نہیں جو ہمارے لئے تشویش کا باعث ہے، مستقبل میں ہماری کوشش ہو گی کہ بہترین تیاری کے ساتھ ایشیائی ٹیموں کے خلاف کھیلیں۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -