ملک بھر میں یوم عاشور کے جلوس اپنی مقررہ منزلوں پر پہنچ کر اختتام پذیر

ملک بھر میں یوم عاشور کے جلوس اپنی مقررہ منزلوں پر پہنچ کر اختتام پذیر
ملک بھر میں یوم عاشور کے جلوس اپنی مقررہ منزلوں پر پہنچ کر اختتام پذیر

  

 لاہور،کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک )نواسہ رسول ﷺ حضرت امام حسینؓ اور ان کے ساتھیوں کی شہادت کی یاد میں یوم عاشور آج مذہبی عقیدت اور جوش وجذبے سے منایا گیا ، لاہوراور کراچی میں مرکزی جلوس برآمد کئے گئےجبکہ راولپنڈی اور پشاور سمیت دیگر شہروں میں بھی شبیہہ علم اور ذوالجناح کے جلوس نکالےگئے اور  جن میں علما اور ذاکرین شہداءکربلا کو بھر پور خراج عقیدت پیش کیا۔

تفصیلات کے مطابق ملک بھر میں یوم عاشورروایتی عقیدت و احترام سے منایاگیا۔ لاہور میں مرکزی جلوس اندرون موچی گیٹ، نثار حویلی سے برآمد ہوا جو محلہ شیعاں، لال کھوہ، چوک نواب صاحب، کشمیری بازار، رنگ محل اور اندرون بھاٹی گیٹ سے ہوتا ہوا مغرب کے وقت کربلا گامے شاہ پہنچ کر اختتام پذیر ہوا جہاں مجلس شام غریباں بھرپا کی گئی۔ جلوس کے راستوں کو پر امن بنانے کے لئے  6 ہزار پولیس اہلکار اوررضا کاروں نے  ڈیوٹی دی، جلوس میں شامل ہونے والوں کی میٹل ڈی ٹیکٹرز سے چیکنگ کی گئی جبکہ  واک تھرو گیٹس بھی لگائے گئےتھے۔

دوسری جانب کراچی میں یوم عاشور کا جلوس نشتر پارک سے برآمد ہوا جو ایم اے جناح روڈ ایمپریس مارکیٹ، ریگل چوک اور تبت سینٹر سے ہوتا ہوا حسینیہ ایرانیاں کھارا در پہنچا۔ راولپنڈی میں امام بارگاہ کرنل مقبول سے صبح دس بجے برآمد ہونے والا جلوس روایتی راستوں سے ہوتا ہوا رات نو بجے قدیمی امام بارگاہ پہنچا۔ پشاور میں مختلف علاقوں سے گیارہ جلوس برآمد ہوئے جو روایتی راستوں سے ہوتے ہوئے منازل پر پہنچ کر ختم ہو ئے۔ کوئٹہ میں مرکزی جلوس امام بارگاہ حسینی سے برآمد ہوا  جو بعد نماز مغرب علمدار روڈ پر پنجابی امام بارگاہ پہچا۔ ملتان میں آستانہ لال شاہ سے برآمد ہونے والا جلوس شاہ شمس کے دربار پر پہنچ کر ختم ہو گیا۔

یوم عاشور پر ملک بھر میں سکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کیے گئے تھے اور کسی بھی ناخوشگوار واقعے سے بچنے کے لیے کراچی، لاہور، اسلام آباد سمیت دیگر شہروں میں موٹرسائیکل کی ڈبل سواری پر بھی پابندی عائد کی گئی تھی جب کہ کراچی، لاہور، پشاور، کوئٹہ اور اسلام آباد سمیت دیگر شہروں میں موبائل فون سروس بھی معطل رہی۔

وزارت داخلہ کی جانب سے یوم عاشور پر ہائی الرٹ جاری کیا گیا تھا جس میں حساس اداروں نے یوم عاشور پر دہشت گردی کا خدشہ ظاہر کیا تھا ۔ وزارت داخلہ کے مطابق ملک کے انتہائی حساس 54 اضلاع میں 32 ہزار سے زائد سیکیورٹی اہلکار تعینات تھے جس میں پاک فوج، فرنٹیئر کانسٹیبلری، رینجرز اور ایف سی کے دستے بھی شامل تھے ، پیرا ملٹری فورسز کو 12 محرم تک خصوصی اختیارات سونپے گئے ہیں جس کے تحت وہ فوری طور پر دہشت گردی کی کارروائی کو ناکام بنانے میں اپنا اہم کردار ادا کریں گے۔

مزید :

قومی -Headlines -