’تم نے ہمیں اسلحہ نہیں دیا تو نہ دو، ہم روس سے لے لیں گے‘ امریکہ کے قریبی دوست ملک نے ہی وہ بات کہہ دی جو آج سے پہلے کسی میں کہنے کی جرات نہ تھی

’تم نے ہمیں اسلحہ نہیں دیا تو نہ دو، ہم روس سے لے لیں گے‘ امریکہ کے قریبی ...
’تم نے ہمیں اسلحہ نہیں دیا تو نہ دو، ہم روس سے لے لیں گے‘ امریکہ کے قریبی دوست ملک نے ہی وہ بات کہہ دی جو آج سے پہلے کسی میں کہنے کی جرات نہ تھی

  

منیلا(مانیٹرنگ ڈیسک)فلپائنی صدر روڈریگو ڈوٹرٹے کی طرف سے باراک اوباما کے متعلق نازیبا استعمال کیے جانے کے بعد سے اطلاعات آ رہی ہیں کہ امریکی حکومت فلپائن کو اسلحے کی فروخت روکنے جا رہی ہے۔ اس پر ایک بار پھر روڈریگو نے امریکہ کو کھری کھری سنا دی ہیں۔ انہوں نے کہا ہے کہ ”ہتھیاروں کی فروخت روکنے کی باتیں کرکے امریکہ مجھے بلیک میل کرنے کی کوشش رہا ہے لیکن خود ہمارے پاس بہت اسلحہ ہے اور اگر امریکہ اسلحہ دینے سے انکار کر دے گا تو ہم روس کے پاس چلے جائیں گے۔“

’یہ یورپی ملک اب ہمارے ایٹمی میزائلوں کے نشانے پر ہے‘ روس کے اعلان نے کھلبلی مچادی، کونسا ملک ہے؟ کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا

انہوں نے مزید کہا کہ ”مجھے یاد ہے جو روسی سفیر نے کہا تھا۔ انہوں نے کہا تھا کہ روس آﺅ، روس میں وہ سب کچھ ہے جس کی آپ کو ضرورت ہے۔“واضح رہے کہ گزشتہ روز عالمی خبررساں ایجنسی رائٹرز نے اپنی رپورٹ میں بتایا تھا کہ امریکہ سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ فلپائن کو 26ہزار رائفلوں کی فروخت روکنے جا رہا ہے۔ فلپائن یہ رائفلیں اپنی پولیس کے لیے خرید رہا تھا۔ امریکہ کو فلپائن میں جاری منشیات کے خلاف آپریشن پر تحفظات لاحق ہیں جس میں اب تک 1200سے زائد افراد کو موت کے گھاٹ اتارا جا چکا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -