وہ ملک جہاں مسلمانوں کا 1400 سال پرانا تاریخی قبرستان مسمار کرکے اُس کی جگہ پارک تعمیر کیا جارہا ہے اور پوری مسلم دنیا خاموشی سے تماشا دیکھ رہی ہے

وہ ملک جہاں مسلمانوں کا 1400 سال پرانا تاریخی قبرستان مسمار کرکے اُس کی جگہ ...
وہ ملک جہاں مسلمانوں کا 1400 سال پرانا تاریخی قبرستان مسمار کرکے اُس کی جگہ پارک تعمیر کیا جارہا ہے اور پوری مسلم دنیا خاموشی سے تماشا دیکھ رہی ہے

  

یروشلم (نیوز ڈیسک) اسرائیلی درندوں نے مظلوم فلسطینیوں کی زمین پر قبضہ کرکے ان کے گھر اجاڑ دئیے ہیں، اور صرف اسی پر اکتفا نہیں کیا بلکہ ان کی درندگی اس انتہا کو پہنچ گئی ہے کہ مشرقی یروشلم میں ایک تفریحی پارک بنانے کے لئے مسلمانوں کے قدیم اور تاریخی قبرستان کو ملیا میٹ کردیا گیا ہے۔

اخبار دی انڈیپینڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق فلسطینی حکام کا کہنا ہے کہ مقبوضہ یروشلم کے مشرقی حصے میں واقع باب الرحمت قبرستان پر اسرائیلی حکام نے اپنی ظالم فوج کی مدد کے ساتھ چڑھائی کی اور قبروں کو مسمار کرنا شروع کردیا۔ اسرائیلی حکومت نے گزشتہ سال ستمبر کے مہینے میں ہی اس قبرستان پر قبضہ کرلیا تھا اور اس کی جگہ پارک تعمیر کرنے کی کوششیں کی گئیں لیکن فلسطینیوں کے شدید ردعمل کے خدشے کے باعث اب تک قبروں کو مسمار نہیں کیا گیا تھا۔

فرعون کی قبر پر لکھی 3800 سال پرانی وہ تحریر جسے دیکھ کر سائنسدان بھی حیرت سے ایک دوسرے کے منہ تکنے لگے

قبرستانوں کی دیکھ بھال کے لئے قائم کی گئی کمیٹی کے سربراہ مصطفی ابوزہرہ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اسرائیل مسلمانوں کے قبرستان کی جگہ یہودیوں کے لئے تفریحی پارک بنا رہا ہے۔ انہوں نے اس بات پر شدید دکھ کا اظہار کیا کہ ظالم اسرائیل نے تو اپنی تفریح گاہ بنانے کے لئے ایک قبرستان کو مسمار کر دیا ہے لیکن کسی بھی مسلم ملک نے اس اندوہناک واقعے پر ایک بیان تک جاری نہیں کیا۔

واضح رہے کہ مشرقی یروشلم میں واقع یہ قبرستان 1400 سال قدیم تھا اور اسے متعدد بین لاقوامی اداروں کی جانب سے بھی عالمی تاریخی ورثے کا حصہ قرار دیا گیا تھا۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -