حکمرانوں کو حضرت عمرفاروقؓکو رول ماڈل بنانا ہو گا،شوریٰ ہمدرد

حکمرانوں کو حضرت عمرفاروقؓکو رول ماڈل بنانا ہو گا،شوریٰ ہمدرد

  

لاہور(پ ر)ہمارا ملک جن حالات سے دوچار ہے اُس کی اصل وجہ قرضوں پر منحصر میگا پراجیکٹس اور احتجاج ہیں جسکا فائدہ عام عوام کی بجائے محض مخصوص طبقہ اُٹھا رہا ہے جبکہ عامۃ الناس کو روز بروز مشکلات کا سامنا ہے۔ صورتحال یہ بنتی جا رہی ہے کہ قوم کو اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ طرزِ حکومت جمہوری ہے یا آمرانہ ، انہیں تو بس انکے مسائل کا حل چاہیے اِنکے لیے پیٹ بھر کھانا ،اچھی تعلیم اور علاج معالجہ کی بہترین سہولتیں اوّلین ترجیحات ہیں،حکمرانوں کو اپنا طرزِ سیاست او ر حکمرانی کو تبدیل کرتے ہوئے حضرت عمرؓ کو رول ماڈل بنانا ہوگاجسکے نتیجے میں سماجی اور معاشی بہبود اور معاشرتی انصاف قائم ہوگا۔ان خیالات کا اظہار گذشتہ روز ’’سیاست کی بنیاد۔سماجی اور معاشی بہبود پر رکھنے کی ضرورت‘‘ کے موضوع پر شوریٰ ہمدرد کے اجلاس سے مقررین نے کیاجبکہ پاکستان فریڈم موومنٹ کے چیئر مین ہارون خواجہ نے کلیدی خطاب کیا جس میں انہوں نے اس امر پر زور دیا کہ ملک کی تعمیرو ترقی اور عوام کی فلاح و بہبود کے لیے موجودہ نظام کو بدلنا ہوگا کیونکہ یہ نظام دراصل انگریز کے ڈیڑھ سوسالہ طرزِ حکمرانی کا تسلسل ہے،انہوں نے بتایا کہ سیاسی جماعت قائم کرنے سے پہلے انہوں نے ایک نظام کے تحت سندھ اور پنجاب میں دو ماڈل گاؤں تعمیر کئے جہاں 6سال سے بطریق اَحسن لوگوں کو ہر قسم کی سہولتیں فراہم ہو رہی ہیں۔اجلاس میں بشریٰ رحمن ،ڈاکٹر رفیق احمد،چیئرمین پاکستان فریڈم موومنٹ ہارون خواجہ ، ابصار عبدالعلی،قیوم نظامی،میجر (ر)صدیق ریحان، جنرل(ر)راحت لطیف، بر گیڈ یئر(ر)حامد سعید اختر ، جسٹس (ر)منیر احمد مغل،تاثیر مصطفی ،ایثار رانا ، پروفیسر خالد محمود عطاء، پروفیسر نصیر اے چوہدری،ثمر جمیل خان ،خالدہ جمیل چوہدری ،رانا امیر احمد خان ، پروفیسرمیاں محمد اکرم،سید انوار قمر،غلام محمد لالی،محمد بلال صابراور دیگر شامل تھے ۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -